فرانسیسی صدر کی یو اے ای آمد، مالی میں فوجی مداخلت کا دفاع

افریقی ملک میں جنگجوؤں کے خلاف جنگ میں کودنے کی اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

فرانسیسی صدر نے ابو ظہبی میں متحدہ عرب امارات کے صدر اور دوسرے اعلیٰ عہدے داروں سے ساٹھ رافیل جنگی طیاروں کی فروخت سے متعلق معاملے اور دونوں ممالک کے درمیان توانائی اور دفاعی صنعت کے شعبوں میں تعاون بڑھانے کے طریقوں پر بات چیت کی ہے۔

فرانسو اولاند اس امید کے ساتھ ابوظہبی آئے ہیں کہ ان کے اس دورے میں یو اے ای کی حکومت کے ساتھ مذاکرات میں جنگی طیاروں کی فروخت کے لیے حتمی معاہدہ طے پا جائے گا۔ فرانس کی طیارہ ساز کمپنی ڈاسالٹ ایوی ایشن گذشتہ کئی سال سے رافیل طیاروں کی فروخت کے لیے یواے ای کے حکام سے بات چیت کررہی ہے لیکن ان کے درمیان ابھی تک کوئی حتمی سمجھوتا نہیں پا سکا ہے۔ اس وقت رافیل طیارے صرف فرانس کے ہی زیر استعمال ہیں جبکہ یو اے ای امریکا سے جنگی طیارے اور دوسرا فوجی ساز و سامان خرید کر رہا ہے۔

یواے ای کے ایک سنئیر عسکری عہدے دار نے 2011ء کے آخر میں کہا تھا کہ فرانسیسی کمپنی اپنے طیاروں کی فروخت کے لیے غیر مسابقتی اور ناقابل عمل کاروباری شرائط عاید کرنا چاہتی ہے۔اس لیے ان کے شرائط پیش نظر رافیل طیاروں کی خریداری کے لیے معاہدے کے امکانات معدوم نظر آتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں