.

تیونس کی لبرل جماعتوں کا اسلام پسندوں کے خلاف انتخابی اتحاد

اتحاد میں نمایاں نام سابق وزیر اعظم کی جماعت حزب ندا کا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
تیونس میں تمام سیاسی جماعتیں انتخابات کی تیاری میں مصروف ہیں۔ حزب اختلاف کی جماعتیں اسلام پسندوں کو پیش آئند انتخاب میں شکست دینے کے لئے نئی انتخابی صف بندی میں مصروف ہیں۔

حکمران جماعت نہضت اسلامی کے خلاف بننے والے نئے اتحاد میں سابق وزیر اعظم قائد السبسی کی جماعت 'حزب نداء' می الجریبی کی جمہوری پارٹی اور حزب المسار نمایاں ہیں۔نئے انتخابی میں شامل جماعتوں کا ملک میں سول جمہوریت، خواتین حقوق کے حوالے سے یکساں موقف ہے۔

نیا سیاسی اتحاد انتخابات میں نہضت اسلامی کو شکست فاش دینا چاہتا ہے کیونکہ اتحاد میں شامل رکن جماعتوں کا خیال ہے کہ ماضی میں ان کی صفوں میں انتشار کا فائدہ اسلامی قوتوں کو ہوا جس کے باعث انہیں اقتدار میں آ کر ملک کی لبرل بنیادوں پر حملوں کا موقع ملا۔

اسلام پسند حکمران جماعت نہضت اسلامی قانون ساز اسمبلی سے انقلاب کو تحفظ دلانے کے لئے قانون منظور کرانا چاہتی ہے۔ اپوزیشن حلقے اس قانون کی منظوری کو سابق وزیر اعظم کی جماعت حزب نداء کو سیاسی منظر نامے سے ہٹانے کی کوشش سے تعبیر کر رہی ہے۔