.

سرب وزیر اعظم کا مقامی چینل کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا اعلان

جنسی پروگرام میں شرکت کا 'وعدہ' آن ائر کرنے پر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سربیا کے وزیر اعظم ایوسٹا ڈاچچ نے خفیہ کیمرہ پروگرام کے ایک پروڈیوسر کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا فیصلہ کیا ہے۔ بہ قول وزیر اعظم متنازعہ پروڈیوسر نے انہیں بتائے بغیر ایک مزاحیہ پروگرام کی ریکارڈنگ کی۔ ریکارڈنگ کے دوران ان سے منسوب ویڈیو بیان بھی پروگرام کے 'اشتہارات' میں چلایا گیا جس میں مسٹر ایوسٹا فکاہی شو میں شرکت کا عندیہ ظاہر کر رہے تھے۔

وزیر اعظم ڈاچچ کے مشیر برائے سلامتی ایوسٹا ٹونسٹیو نے بتایا کہ وزیر اعظم نے 'مشن امپاسیبل' نامی پروگرام آن کرنے کی اجازت نہیں دی تھی۔ اسی پروگرام کی فوٹیج سے ان کا 'مشن امپاسیبل' میں شرکت والا بیان لیا گیا تھا۔

سربین وزیر اعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی بے بلغراد میں جاری کردہ اخباری بیان میں کہا کہ ہم اس واقعہ کی تفتیش کر رہے ہیں کہ جو کسی ایک فرد کی نہیں بلکہ پورے سربیا کی توہین کا باعث بنا۔ انہوں نے کہا کہ پروگرام تیار کرنے والوں نے وزیر اعظم کے اعتماد کو ٹھیس پہنچائی
انہوں نے بتایا کہ سربین کابینہ ایسی حرکت کرنے والوں کے لئے سزا تجویز کرنے پر غور کر رہی ہے کیونکہ بغیر واضح اجازت ایسا کرنا فرد اور معاشرے دونوں کے لئے نقصان کا باعث بن سکتا ہے۔

یاد رہے کہ سربیا کے وزیر اعظم، جن کے پاس وزارت داخلہ کا قلمدان بھی ہے، 'پنک ٹی وی' کے ایک پروگرام میں ایک نیم عریاں خاتون کو انٹرویو دینے کے باعث مذاق بن چکے تھے کیونکہ 'مشن امپاسیبل' کی پیش کار خاتون اینکر ماضی میں 'پلے بوائے' نامی رسالے میں عریاں تصاویر کے لئے شوٹ کرانے کی وجہ سے ملک میں 'مشہور' ہیں۔