شام، ترکی سرحد پر بم دھماکا، 9 افراد ہلاک ، 30 زخمی

ترکی کے سرحدی علاقے میں بم دھماکے کی تصدیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ترکی اور شام کے درمیان واقع سرحدی علاقے میں ایک کار بم دھماکے کے نتیجے میں نوافراد ہلاک اور تیس سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

ابتدائی اطلاعات کے مطابق بم دھماکا ترکی کی سرحدی حدود میں صوبہ حاتے کے شہر ریحان علی کے نزدیک ہوا ہے اور اس کے لیے شام میں رجسٹر کار استعمال کی گئی ہے۔ترکی کے اس علاقے کے مئیر حسین سنوردی نے بھی اس اطلاع کی تصدیق کی ہے۔

ترکی کے این ٹی وی کی اطلاع کے مطابق شام اور ترکی کے درمیان واقع سرحدی گذرگاہ چیل ویگوزو سے صرف چالیس میٹر دور بم دھماکا ہوا ہے۔واقعے کے فوری بعد امدادی کارروائیاں شروع کردی گئیں اور زخمیوں کو اسپتالوں میں منتقل کردیا گیا ہے۔اس چینل کا کہنا ہے کہ بم دھماکا ممکنہ طور پر شام کی جانب سے فائر کیا گیا ایک گولہ گرنے کے بعد ہوا ہے۔

انقرہ میں ترکی کی وزارت خارجہ کے ایک عہدے دار نے سرحدی علاقے میں اس تباہ کن دھماکے کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ بم دھماکے کے بعد قریب کھڑی گاڑیوں کو آگاہ لگ گئی اور اس سے انسانی امدادی سرگرمیوں کے لیے استعمال ہونے والی پندرہ گاڑیوں کو نقصان پہنچا ہے۔یہ گاڑیاں وہاں ایک قطار میں کھڑی تھیں اور ان کے ساتھ کھڑے ٹرکوں پر امدادی سامان لدا ہوا تھا جو شام کی جانب روانہ کیا جانے والا تھا۔

ترک وزارت خارجہ کے ایک اور عہدے دار کا کہنا ہے کہ دھماکا مارٹر گولہ گرنے کے نتیجے میں نہیں ہوا بلکہ ایک خودکش بمبار نے یہ دھماکا کیا ہے اور اس سے سرحدی گذرگاہ پر لگے دروازوں کو بھی نقصان پہنچا ہے۔ترکی کی اس چیک پوسٹ کے بالمقابل شام کی باب الحوا پوسٹ واقع ہے۔تاہم اس عہدے دار کا کہنا تھا کہ واقعہ کی تحقیقات جاری ہے اور اس کے بارے میں کچھ کہنا قبل از وقت ہوگا۔

واضح رہے کہ ترکی کے سرحدی علاقے میں یہ بم دھماکا نیٹو کی جانب سے امریکی ساختہ پیٹریاٹ میزائلوں کی تنصیب کے تین ہفتے کے بعد ہوا ہے۔نیٹو کے رکن ملک ترکی کے شام کے ساتھ واقع سرحدی علاقے کو محفوظ بنانے کے لیے جرمنی اور نیدر لینڈز نے دو ،دومیزائل بیٹریز بھیجی ہیں۔تاہم ابھی تک ان کے ترکی پہنچنے کی اطلاع سامنے نہیں آئی ہے۔ترکی نے گذشتہ سال اکتوبر میں شامی علاقے کی جانب سے فائر کیے گئے مارٹر گولے گرنے کے بعد نیٹو سے فوجی مدد کی درخواست کی تھی تاکہ شام کی جارحیت کا توڑ کیا جاسکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں