شام میں جاری تنازعے سے دوطرفہ نقصان ہوگا:روس کا انتباہ

بشارالاسد کی حکومت اور باغی تنازعے کا جلد خاتمہ کریں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس کے وزیرخارجہ سرگئی لاروف نے شامی حکومت اور باغیوں پر زوردیا ہے کہ وہ جلد سے جلد ملک میں جاری تنازعے کا خاتمہ کریں۔انھوں نے خبردار کیا ہے کہ لڑائی جاری رہنے کی صورت میں دونوں طرف کانقصان اور تباہی ہوگی۔

روسی وزیرخارجہ نے عرب لیگ کے سیکرٹری جنرل نبیل العربی اور دوسرے عہدے داروں کے ساتھ ملاقات میں کہا کہ ''اب وقت آگیا ہے کہ گذشتہ دوسال سے جاری تنازعے کا خاتمہ کیا جائے''۔انھوں نے کہا کہ کوئی بھی فریق تنازعے کا فوجی حل نہیں نکال سکتا بلکہ یہ تناہی اور بربادی کا راستہ ہے۔

انھوں نے بتایا کہ ''ماسکو شامی صدر بشارالاسد کی حکومت اور باغیوں کے درمیان مذاکرات کی حوصلہ افزائی کے لیے کام کررہا ہے اور حکومت اور باغیوں کی جانب سے براہ راست مذاکرات کی بحالی کے لیے حوصلہ افزا اشارے ملے ہیں لیکن اس بات کا فیصلہ کرنا ان دونوں فریقوں کا کام ہے کہ ان کے درمیان کس قسم اور کس سطح کے مذاکرات ہوں گے''۔

سرگئی لاروف نے کہا کہ ''اہم بات یہ کہ وہ ان مذاکرات کے لیے کسی شرط کے بغیر آگے بڑھیں اور کوئی بھی اس قسم کی کوئی شرط عاید نہ کرے کہ وہ فلاں شخص سے تو بات کرے گا لیکن فلاں سے نہیں''۔

روسی وزیرخارجہ نے بتایا کہ ہم شامی حزب اختلاف کے قومی اتحاد کے سربراہ معاذالخطیب کے ماسکو کے دورے کے لیے بھی کام کررہے ہیں اور توقع ہے کہ وہ یکم مارچ کے بعد کسی وقت یہ دورہ کریں گے۔ واضح رہے کہ شامی وزیر خارجہ ولید المعلم آیندہ سوموار کو ماسکو کا دورہ کریں گے جہاں وہ روسی عہدے داروں سے بحران کے حال کے لیے بات چیت کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں