.

سعودی عرب میں ٹویٹر پر رسائی محدود کرنے کا منصوبہ

رسائی کو شناخت کے حوالے رجسٹریشن سے مشروط کرنے کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب ملک میں ٹویٹر استعمال کرنے والوں کی پوشیدہ شناخت کو ختم کرنے کی کوشش کر سکتا ہے۔ انگریزی اخبار 'دی عرب نیوز' کے مطابق حکومت چاہتی ہے کہ صرف ان صارفین کو ٹویٹر ویب سائٹ تک رسائی دی جائے جو پہلے اپنی شناخت کے حوالے سے رجسٹریشن کرائیں۔

اخبار نے سرکاری حکام کے حوالے سے بتایا اس اقدام سے صارف کی شناخت دوسرے ٹویٹر صارفین سے تو پوشیدہ رہ سکے گی لیکن حکومت کسی بھی صارف کی بھیجی گئی ٹوئیٹس کی مکمل نگرانی کر سکے گی۔

سعودی ولی عہد شہزادہ سلمان کے بیٹے کے زیر نگرانی شائع ہونے والے عرب روزنامے الشرق الاوسط نے یہ نہیں بتایا کہ حکام کس طرح ٹویٹر پر کچھ بھی پوسٹ کرنے کی صلاحیت کو ختم کر سکیں گے۔

مقامی میڈیا نے گزشتہ ہفتہ بتایا تھا کہ حکومت نے ٹیلی کام کمپنیوں سے ایسے طریقہ کار تلاش کرنے کو کہا ہے جس سے اسکائیپ جیسی مخلتف مفت انٹرنیٹ ٹیلی فون سہولیات کی نگرانی کی جا سکے اور ضرورت پڑنے پر انہیں بند بھی کیا جا سکے۔

ملک کی ٹیلی کام ریگولیٹر اتھارٹی نے ان خبروں پر فوری طور پر کسی بھی قسم کا تبصرہ نہیں کیا۔ گزشتہ ہفتے اسکائیپ کی بندش سے متعلق خبروں پر بھی اتھارٹی نے خاموشی اختیار کی تھی۔

سعودی شہریوں میں ٹویٹر بے انتہا مقبول ہے اور اس کے ذریعے مذہب، ملکی سیاست اور دوسرے بے شمار موضوعات پر تبادلہ خیال کیا جاتا ہے۔