.

سعودی عرب میں طوفانی بارشوں کے بعد سیلاب ،16 ہلاکتیں

جزیرہ نما عرب میں اپریل میں بارشوں کا 25 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں گذشتہ جمعہ سے جاری طوفانی بارشوں کے نتیجے میں سیلاب میں سولہ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

سعودی عرب کی سرکاری خبررساں ایجنسی ایس پی اے نے بدھ کو محکمہ شہری دفاع کے حکام کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ دارالحکومت ریاض ، جنوبی علاقے بھاء اور شمالی علاقے حائل میں سیلاب سے ہلاکتیں ہوئی ہیں۔

سعودی عرب اور اس کی ہمسایہ خلیجی ریاستوں میں جمعہ کو بارشوں کا سلسلہ شروع ہوا تھا۔منگل تک تیرہ افراد جاں بحق ہو گئے تھے اور آج مزید تین افراد مارے گئے ہیں جبکہ چار افراد لاپتا ہیں۔ہمسایہ ریاست سلطنت آف اومان میں دوافراد کی ہلاکت کی اطلاع ملی ہے۔

جزیرہ نما سعودی مملکت میں گذشتہ پچیس سال میں اپریل میں یہ شدید بارشیں ہیں اور حکام نے شہریوں کو میدانی علاقوں اور وادیوں میں نہ جانے کی ہدایت کی ہے۔ٹی وی چینلز کی فوٹیج میں کاروں کو سیلابی ریلے میں بہتے ہوئے دکھایا گیا ہے اور بعض افراد جانیں بچانے کے لیے درختوں پر چڑھے ہوئے ہیں۔

واضح رہے کہ سعودی عرب کے ساحلی شہر جدہ میں 2011 ء میں سیلاب کے نتیجے میں دس افراد ہلاک ہوگئے تھے اور اس سے دوسال پہلے 2009 ء میں جدہ ہی میں 123 افراد طوفانی بارشوں کے بعد سیلاب کی نذر ہوگئے تھے۔تب جدہ میں بے ہنگم تعمیرات اور نکاسی آب کے ناقص نظام کو سیلاب کا بنیادی سبب قرار دیا گیا تھا اور شہر بھر میں بروقت نکاسیِ آب نہ ہونے کی وجہ سے کئی کئی فٹ تک پانی جمع ہوگیا تھا اور شہری اس پانی میں ڈوب کر مرتے رہے تھے۔