.

پوپ فرانسِس سے لبنان کے صدر مائیکل سلیمان کی ملاقات

شام میں جاری خانہ جنگی سمیت مشرق وسطیٰ کی صورت حال پر تبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

رومن کیتھولک کے روحانی پیشوا پوپ فرانسس نے جمعہ کے روز لبنان کے صدر مائیکل سلیمان سے ویٹی کن میں ملاقات کی ہے اور ان سے مشرق وسطیٰ کی صورت حال اور خاص طور پر شام میں جاری خانہ جنگی کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا ہے۔

لبنانی صدر نے پہلے پاپائے روم سے تنہائی میں کوئی آدھے گھنٹے تک ملاقات کی اور اس کے بعد ان کی اہلیہ سمیت وفد میں شامل دس ارکان بھی اس ملاقات میں شریک ہوگئے۔لبنانی صدر خود مذہباً عیسائی ہیں۔

انھوں نے لبنان میں نسلی اور مذہبی تنوع کے حوالے سے بھی بات چیت کی اور مختلف نسلی برادریوں سے تعلق رکھنے والے افراد کے درمیان مکالمے اور باہمی تعاون کی ضرورت پر زوردیا۔

پوپ اور لبنانی صدر نے اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان جاری کشیدگی پر بھی بات چیت کی اور خطے میں قیام امن کے لیے فریقین کے درمیان تعطل کا شکار مذاکرات کی بحالی پر زور دیا۔

واضح رہے کہ لبنان کے اہل تشیع اور ان کی جماعتیں شامی صدر بشارالاسد کی حمایت کررہے ہیں جبکہ اہل سنت شامی حزب اختلاف اور باغی جنگجوؤں کے حامی ہیں۔بعض تجزیہ کار اس خدشے کا اظہار کرچکے ہیں شام میں جاری خانہ جنگی لبنان کو بھی اپنی لپیٹ میں لے سکتی ہے۔