.

روس، شام کو میزائل فراہمی کے آخری مرحلے میں ہے: لاروف

'جرمنی، شامی بحران کا سیاسی حل چاہتا ہے'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاروف نے جمعہ کے روز وارسا میں جاری کردہ بیان میں تصدیق کی ہے کہ ان کا ملک شام کو اپنی فضائی حدود کا دفاع کرنے کی خاطر میزائل فراہمی کے آخری مرحلے میں ہے جبکہ جرمن وزیر خارجہ گیڈو ویسٹرویلا نے ماسکو پر زور دیا ہے کہ وہ شام کو اسلحہ فراہمی بند کرے۔

سرگئی لاروف نے صحافیوں کو بتایا کہ روس، ایک مدت سے شام کو میزائل فروخت کر رہا ہے۔ اس ضمن میں معاہدوں پر دستخط ہو چکے ہیں اور اب ان میزائیلوں کی فراہمی آخری مرحلے میں ہے۔ نیز یہ عمل تمام بین الاقوامی کنونشز کو تج کر جاری و ساری ہے۔

جمعرات کو ایک بیان میں امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے روم میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا تھا کہ شام کو روسی میزائل کی فراہمی سے علاقائی امن بری طرح متاثر ہو گا۔

جرمن وزیر خارجہ گیڈو ویسٹرویلا نے وارسا میں ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ شام کو اسلحہ فراہمی کے بارے میں روسی نقطہ نظر سے متفق نہیں ہیں۔ انہوں نے شام کو اسلحہ فراہمی روکنے کا مطالبہ کیا ہے۔

انہوں نے روس، پولینڈ اور جرمنی کے وزراء خارجہ کے ساتھ اپنی سہ فریقی ملاقات کے بعد بتایا کہ ان کا ملک شام کو اسلحہ فراہمی روکنے کی غرض سے بین الاقوامی کارروائیوں کا حامی ہے کیونکہ ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ ہم بحران کے حل کی خاطر سیاسی آپشن پر زیادہ انحصار کریں۔