ترک فوج کا شامی سرحد کے نزدیک محو پرواز لڑاکا طیارہ لاپتا

طیارے کا رابطہ منقطع،تباہ ہونے کی اطلاع،ریسکیو آپریشن جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترک فوج نے اطلاع دی ہے کہ اس کا ایک ایف سولہ لڑاکا طیارہ لاپتا ہوگیا ہے اور اس کا طیارے سے شام کی سرحد کے سے پچاس کلومیٹر دور واقع جنوبی شہر عثمانیہ پر پرواز کے دوران رابطہ منقطع ہوگیا ہے۔

ترکی کے این ٹی وی چینل نے فوجی ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ جنگی طیارہ ممکنہ طور پر حادثے کا شکار ہوگیا ہے۔ترک فوج نے سوموار کو جاری کردہ ایک بیان میں بتایا ہے کہ لاپتا طیارے کی تلاش کے لیے آپریشن شروع کردیا گیا ہے۔بیان کے مطابق پائیلٹ نے آخری مرتبہ طیارے سے ہنگامی طور پراترنے کا پیغام دیا تھا۔

یادرہے کہ جون 2012 ء میں شام نے ترکی کے ایک فوجی لڑاکا طیارے کو بحر متوسطہ پر پرواز کے دوران مار گرایا تھا اور اس نے یہ کہا تھا کہ اس نے اپنے دفاع میں یہ کارروائی کی تھی۔

ترکی شامی صدر بشارالاسد کو ان کی سکیورٹی فورسز کی حکومت مخالفین کے خلاف کریک ڈاؤن کارروائیوں پر کڑی تنقید کا نشانہ بنا رہا ہے۔خود وزیراعظم رجب طیب ایردوآن نے ان پر کیمیائی ہتھیار استعمال کرنے کا الزام عاید کیا ہے اور انھیں قصائی قرار دیا ہے۔

ترکی نے اتوار کو نوافراد کو جنوبی صوبے حاتائی کے سرحدی قصبے ریحان علی میں ہفتے کے روز دو کاربم دھماکوں کے الزام میں گرفتار کر لیا تھا۔ان بم دھماکوں میں مرنے والوں کی تعداد اڑتالیس ہوگئی ہے۔ترکی نے ان بم دھماکوں کے ردعمل میں کہا ہے کہ سرخ لکیر عبور کی جاچکی ہے۔

شام نے ترکی کے سرحدی علاقے میں کار بم دھماکوں میں ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔شامی وزیراطلاعات عمران الزعبی نے دمشق میں نیوز کانفرنس میں کہا کہ ''کسی کو بھی غلط الزامات عاید کرنے کا حق حاصل نہیں ہے۔شام نے اس طرح کی کوئی کارروائی کی ہے اور نہ کرے گا کیونکہ ہماری اقدار اس بات کی اجازت نہیں دیتی ہیں''۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں