گولان پر''حملے'' کے بعد اسرائیلی فوج کی شامی علاقے پر گولہ باری

شامی فوج کی فائرنگ سے صہیونی فوج کی گاڑی تباہ،کوئی جانی نقصان نہیں ہوا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے زیر قبضہ گولان کی چوٹیوں پر گشت پر مامور صہیونی فوجیوں نے شام کی جانب سے فائر کے بعد جوابی گولہ باری کی ہے۔

اسرائیلی فوج نے منگل کو اپنی ویب سائٹ پر جاری کردہ ایک بیان میں کہا ہے کہ ''گولان کی چوٹیوں کے وسط میں ایک گشتی پارٹی پر فائرنگ کی گئی تھی جس کے نتیجے میں ایک فوجی گاڑی کو نقصان پہنچا ہے۔البتہ واقعے میں کوئی فوجی زخمی نہیں ہوا''۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ''اس کے ردعمل میں اسرائیلی دفاعی فوج نے جس جگہ سے فائرنگ کی گئی تھی،وہاں فائر کیا ہے اور اس کو براہ راست نشانہ بنایا ہے۔اسرائیلی فوج شمال میں پیش آنے والے ان واقعات کو سنجیدگی سے لے رہی ہے اور اس نے علاقے میں امن کی ذمے دار اقوام متحدہ کی فورس کو شکایت کردی ہے''۔

دوسری جانب شامی فوج نے سرکاری ٹیلی ویژن پر جاری کردہ ایک بیان میں کہا ہے کہ اس نے گولان کی چوٹیوں میں حدمتارکہ جنگ (سیزفائرلائن) کو عبور کرنے والی اسرائیلی فوج کی ایک گاڑی کو تباہ کردیا ہے۔

شامی فوج کا کہنا ہے کہ ''اسرائیلی فوج کی گاڑی حدمتارکہ جنگ کو عبور کرنے کے بعد گولان میں شام کے آزاد علاقے میں واقع گاؤں بئرعجم کی جانب بڑھ رہی تھی''۔

اسرائیلی فوج نے اپنے مذکورہ بیان میں اس فوجی گاڑی کے تباہ ہونے کی تصدیق کی ہے لیکن صہیونی فوج کے ترجمان آویچئی ادراعی نے ٹویٹر پر لکھا ہے کہ ''شامی فوج کی فائرنگ سے کوئی گاڑی تباہ نہیں ہوئی''۔

شام کے علاقے کی جانب سے سوموار کو بھی گولان کی پہاڑیوں پر فائرنگ کی گئی تھی۔العربیہ کے رپورٹر کی اطلاع کے مطابق گولیاں اسرائیلی فوج کی گشتی پارٹی کے نزدیک گری تھیں۔اسرائیلی فوج کی ایک خاتون ترجمان نے اس فائرنگ کی تصدیق کی تھی۔البتہ اس کا کہنا تھا کہ یہ واضح نہیں ہوا کہ فائرنگ ارادی طور پر کی گئی تھی یا گولیاں غلطی سے وہاں آگری تھیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں