.

شامی انقلابیوں کا گولان میں القنیطرہ سرحدی کراسنگ پر قبضہ

یو این امن فوج کا ایک اہلکار شامی راکٹ حملے میں زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حکومت مخالف شامی انقلابیوں نے اسرائیل کے زیر قبضہ گولان کی پہاڑیوں اور شام کو ملانے والی سرحدی راہداری القنیطرہ کا کنڑول حاصل کر لیا ہے.

العربیہ کے نامہ نگار نے اپنے مراسلے میں بتایا کہ حکومت مخالف شامی جنگجوٶں نے اسرائیل اور شام کے درمیان غیر فوجی علاقے میں واقع القنیطرہ سرحدی کراسنگ پر جمعرات کے روز قبضہ کر لیا ہے. تفصیلات کے مطابق شامی انقلابیوں کو یہ کامیابی بشار الاسد کی فوج کے ساتھ شدید جھڑپوں کے بعد ملی ہے.

لندن میں قائم انسانی حقوق آبزرویٹری کا کہنا ہے کہ شامی اپوزیشن جنگجوٶں نے پہلی مرتبہ گولان کے علاقے میں شام اور اسرائیلی سرحد پر واقع کسی اہم مقام کا کنڑول حاصل کیا ہے، تاہم آبزرویٹری نے یہ واضح نہیں کیا کہ آیا اپوزیشن جنگجو اس اہم کامیابی کا تحفظ کرنے کے قابل بھی ہیں یا نہیں.

العربیہ کے نامہ نگار کے مطابق القنیطرہ میں اقوام متحدہ کے فوجی کیمپ پر شام سے داغا جانے والا ہاون راکٹ گرنے سے بین الاقوامی امن فوج دستے میں شامل ایک اہلکار کے زخمی ہونے کی بھی اطلاعات ہیں.

اسرائیلی فوج نے کسانوں کو ایک مرتبہ پھر خبردار کیا ہے کہ وہ گولان کی سرحدی پر سیکیورٹی بار کے قریب جانے سے گریز کریں کیونکہ علاقے میں شامی فوج اور مسلح اپوزیشن کے درمیان لڑائی میں شدت آ رہی ہے.