.

مصری فوج فی الحال النہضہ ڈیم قضیئے سے دور ہے: فوجی ترجمان

بیان سے دونوں ملکوں کے درمیان معاندانہ بیانات کی اہم کم ہو گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری فوج کے ترجمان کرنل احمد محمد علی نے کہا ہے کہ مصری مسلح افواج نے ایتھوپیا کے ساتھ منتازعہ 'النہضہ' ڈیم کے معاملے پر ابھی تک کسی قسم کی مداخلت نہیں کی۔ فوجی ترجمان کے اس بیان سے دونوں ملکوں کے درمیان معاندانہ بیانات کے تبادلے کی اہمیت کم ہو گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ [النہضہ ڈیم] معاملہ فوجی اہمیت کا نہیں رہا اور اس مرحلے پر فوج کو اس میں ملوث کرنا قبل از وقت ہو گا۔

ادھر ایتھوپیا میں دفتر خارجہ کے ترجمان نے صحافیوں کو ایک بریفنگ میں بتایا کہ ان کا ملک النہضہ ڈیم کے معاملے پر ابھی تک مذاکرات کے لئے تیار ہے، تاہم انہوں نے واضح کیا کہ ڈیم کی تعمیر نہ تو روکی جائے گی اور نہ ہی میں اس میں کسی قسم کی تاخیر ممکن ہو سکے گی۔

رواں ہفتے کے آغاز پر مصری صدر محمد مرسی نے کہا تھا کہ وہ اس معاملے پر محاذ جنگ نہیں کھولنا چاہتے، تاہم اس کے باوجود انہوں نے 'تمام آپشنز کھلے' رکھنے کی بات کی جس کے بعد ادیس بابا کی طرف سے یہ بیان سامنے آیا کہ وہ النہضہ ڈیم کے دفاع کے لئے تیار ہیں۔

صدر مرسی کے حالیہ خطاب پر تبصرہ کرتے ہوئے ایتھوپیائی دفتر خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ قاہرہ کی جانب سے تمام آپشن کھلے رکھنے جیسے بیانات کے ذریعے ایتھوپیا کی توجہ اپنے اہم منصوبے سے ہٹائی نہیں جا سکتی ہے۔ 'مصر کی جانب سے نفسیاتی جنگ کے حربے ادیس بابا کو ڈیم بنانے سے روک نہیں سکتے۔"

ایتھوپیا کے دفتر خارجہ کی ترجمان دینا مفتی نے بتایا کہ ان کا ملک مصر سمیت تمام ہمسایہ ملکوں سے دوستی کا خواہاں ہے، اس لئے النہضہ ڈیم کی تمعیر سے متعلق قاہرہ کے خدشات بے بنیاد ہیں، یہ ان کا واہمہ ہے کیونکہ النہضہ ڈیم کی تعمیر سے ہمسایہ ملکوں کو بھی فائدہ ہو گا۔

توقع ہے کہ مصری وزیر خارجہ محمد کامل عمرو آئندہ ہفتے ایتھوپیا جائیں گے جہاں وہ 'النہضہ' ڈیم کی تعمیر سے متعلق امور پر ادیس بابا حکام سے بات کریں گے۔