.

سابق اطالوی وزیراعظم کم عمر طوائف سے جنسی تعلق پر قید کی سزا

سلویو برلسکونی کسی سرکاری عہدے کے لیے بھی نا اہل قرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک اطالوی عدالت نے سابق ارب پتی وزیرِاعظم سلویو برلسکونی کو اپنے عہدے کا ناجائز فائدہ اٹھانے اور کم عمر طوائف سے جنسی تعلقات قائم کرنے کے جرم میں سات برس قید کی سزا سنائی ہے۔ سلویو برلسکونی پر الزام تھا کہ انہوں نے کم عمر لڑکی سے جنسی تعلق قائم کیا۔

عدالت نے سلویو برلسکونی کو کسی بھی سرکاری عہدے کے لیے نااہل قرار دیا ہے۔ سلویو برلسکونی سے متعلق عدالتی فیصلہ اس وقت تک نافد العمل نہیں ہوگا جب تک ان کی اپیل کا فیصلہ نہیں ہو جاتا۔

استغاثہ کا الزام تھا کہ میلان کے نزدیک وزیرِاعظم برلسکونی کی حویلی میں ’بنگا بنگا‘ پارٹیوں کا انتظام ہوتا تھا۔ جہاں ان کی ملاقات سترہ سالہ مراکشی لڑکی مز مہروگ سے ہوئی۔

اطالوی وزیرِاعظم اس بات سے انکار کرتے ہیں کہ انھوں نے کم عمر جسم فروش لڑکی کے ساتھ سیکس کیا اور اپنے اختیارات کا غلط استعمال کیا۔ مراکش کی خاتون رقاصہ مز مہروگ جو روبی ڈانسر کے طور پر جانی جاتی ہیں، بھی مسٹر برلسکونی کے ساتھ سیکس کی تردید کرتی رہی ہیں۔

استغاثہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ سلویو برلسکونی نے روبی ڈانسر کے ساتھ پہلا رابطہ اس وقت قائم کیا تھا جب وہ سولہ برس کی عمر میں سسلی میں مقابلۂ حسن میں دیکھی گئی تھیں۔ الزام یہ تھا کہ انھوں نے فروری دو ہزار دس سے وزیرِاعظم کی حویلی میں پارٹیوں میں شرکت کی جب وہ سترہ برس کی تھیں۔

تاہم ارب پتی سابق وزیرِ اعظم کے وکلاء کہتے ہیں کہ جج کے پاس ان کے خلاف مقدمہ شروع کرنے کا اختیار ہی نہیں ہے۔

گزشتہ برس ایک عدالت نے سلویو برلسکونی کی ٹیکس میں دھوکہ دہی کے جرم میں چار سال قید کی سزا کا حکم دیا تھا۔ اپیل کورٹ نے اسے برقرار رکھا ہے۔ عدالت نے انھیں میڈیا کے کاروبار میں ٹیکس فراڈ کا مرتکب قرار دیا تھا۔ برلسکونی نے الزامات کی ہمیشہ تردید کی ہے ۔ ان کا موقف ہے کہ ان مقدموں کی نوعیت سیاسی ہے۔