مسجد نبوی میں یومیہ ایک لاکھ فرزندان توحید کی افطاری کا انتظام

افطاری کا مینو محدود اور نہایت سادہ ہو گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے شہر مدینہ منورہ کے خوش نصیب ماہ صیام کی برکات سمیٹنے کے لیے مسجد نبوی میں افطاری کا اہتمام کرنا اپنی سعادت سمجھتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اب یہ اہل مدینہ کی ایک مستقل روایت بن چکی ہے۔ وہ نہ صرف خود روزہ مسجد نبوی میں افطار کرنے کو ترجیح دیتے ہیں بلکہ دیگر مسلمان روزہ دار بھائیوں کو اس میں شریک کرنا باعث فخر سمجھتے ہیں۔

وقت کے ساتھ ساتھ صائمین حضرات افطاری کے دسترخوان پر متنوع قسم کے مشروبات اور ماکولات چنتے اور بڑھ چڑھ کر روزہ داروں کی خدمت کرتے آئے ہیں، لیکن اب کی بار مسجد نبوی کی انتظامیہ نے افطار کو سادہ اور باوقار رکھنے کے لیے بہت سی غیرضروری اشیائے خور و نوش لانے سے منع کردیا ہے۔ اب صرف روٹی، دہی، کھجوریں، پانی اور چائے ساتھ لانے کی اجازت ہوگی۔

مسجد نبوی کے امور کے سے متعلق کمیٹی کے نائب چیئرمین عبدالعزیز الفالح کا کہنا ہے کہ امسال انہوں نے ہزاروں روزہ داروں کے لیے مسجد نبوی میں افطار کا اہتمام کیا ہے۔ اس سال پورے ماہ مقدس میں یومیہ کم سے کم ایک لاکھ فرزندان توحید روضہ رسول کے پہلو میں اپنا روزہ افطار کریں گے۔ انہوں نے بتایا کہ افطار کا انتظام نہایت سادہ اور شفاف رکھا جائے گا تاکہ مسجد میں روزہ داروں کے دسترخوان پرکسی قسم کا خلل نہ پڑے اور صفائی کا بھی مکمل اہتمام کیا جا سکے۔

انہوں نے بتایا کہ مسجد نبوی کی دیکھ بحال پرمامور تنظیم کے رضاکار گھروں سے افطاری کا سامان لانے والوں کو صرف کھجوریں، چائے، دہی اور روٹی اندر لانے کی اجازت دیں گے۔ اگر کسی کے پاس اضافی سامان خور ونوش ہوگا تواس کے لیے مسجد کے صحن کی شمالی، مشرقی اور مغربی سمتوں میں الگ سے دسترخوان موجود ہوں گے۔

دسترخوانوں کے درمیان اتنی گنجائش رکھی جائے گی تاکہ روزہ داروں کے چلنے پھرنے اور سامان منتقل کرنے والی ٹرالیوں کی نقل وحرکت میں کوئی خلل نہ آئے۔ نیز خواتین اور مردو روزہ داروں کے لیے الگ الگ دسترخوان بچھائے جائیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں