مصر اور اردن کے درمیان گیس پائپ لائن دھماکے سے اڑا دی گئی

مصر میں جاری انتشار کو بڑھانے کے لیے بیرونی طاقتوں کی سرگرمی میں اضافہ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کے حالیہ فسادات اور انتشار کو ہوا دینے لیے بیرونی طاقتوں نے اپنے ایجنڈے پرعمل تیز کرنے کی کوششیں تیز کر دی ہیں ۔ حالیہ واقعے میں مصری پائپ گیس لائن کو سنائی کے مقام ہر ایک زور دار دھماکے سے اڑا دیا گیا۔ٹی وی چینلوں اور عینی شاہدین کے مطابق حالیہ پائپ لائن دھماکہ ان واقعات کی کڑی ہے جو گزشتہ کافی عرصے سے مصری صورتحال کو انتشارکی طرف لے جا رہے ہیں ۔

چیک پوسٹ پر عسکریت پسندوں کے حملے میں ایک پادری سمیت پانچ سیکیورٹی افسر جاں بحق جبکہ ہفتے کے روز چار دوسری چیک پوسٹوں کو نشانہ بنایا گیا۔تاہم ابھی یہ واضح نہیں ہو سکا کہ اس دھماکے کے پیچھے مصری فوج کے مرسی کو ہٹائے جانے کا ردعمل ہےیا پس پردہ محرکات کچھ اور ہیں۔۔واضح رہے کہ اردن کو گیس فراہم کرنے والییہ گیس پائپ لائن ۲۰۱۱ کی عرب بہاریہ تحریک کے نتیجے میں معزول ہونے والے مصری آمر صدر حسنی مبارک کے دوراقتدار میں بھی دس سے زائد بار دھماکوں سے اڑائی جا چکی ہے۔

حسنی مبارک کے اقتدار سے ہٹائے جانے کے بعد مصرجزیرہ نما سنائی کی ابتر صورتحال کو بہتر کرنے کےلیے کوشاں ہے ۔ بعض حلقےمرسی کے اقتدار پر شب خون مارے جانے کے بعد اس واقعے کو اخوان المسلمون کے ردعمل کے طور پربھی دیکھ رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں