جنوبی کوریا ئی ہوائی کمپنی کا طیارہ لینڈنگ کے وقت حادثے کا شکار

جہاز کا ایک انجن بھی مرکزی حصے سے الگ ہو گیا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

جنوبی کوریا کی ایک فضائی کمپنی طیارہ امریکی شہر سان فرانسسکو کے ہوائی اڈے پر لینڈنگ کے وقت حادثے کا شکار ہو گیا۔ اس حادثے میں دو ہلاک اور 130 مسافروں کے زخمی ہوئے۔

امریکی شہری ہوابازی کے ادارے فیڈرل ایوی ایشن ایڈمنسٹریشن نے اس کی تصدیق کی ہے کہ جنوبی کوریا کی ہوائی کمپنی آسیانہ کا ایک بوئنگ طیارہ سان فرانسسکو کے ہوائی اڈے پر اترتے ہوئے حادثے کا شکار ہو گیا۔ حادثے کے بعد مسافروں کو ہنگامی دروازوں سے جمپ یا چھلانگیں لگوا کر باہر نکالا گیا۔ مسافروں کے لیے ہوا سے بھری ہوئی سلائیڈیں دروازوں کے ساتھ لگائی گئی تھیں۔

ٹیلی وژن فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ لینڈنگ کے وقت ہوائی جہاز کے فیوز لیگ [پیٹ] کا بالائی حصہ جلا ہوا دکھائی دے رہا تھا۔ اس کے علاوہ بوئنگ طیارے کی دم بھی نظر نہیں آ رہی تھی۔ مبصرین کے مطابق اگر ایسا بالائی فضا میں ہوتا تو یہ ایک بہت ہی بھیانک حادثہ ہوتا۔ طیارے کے ساتھ یہ اس وقت ہوا جب وہ لینڈنگ کے وقت زمین کے انتہائی قریب پہنچ چکا تھا۔ لینڈنگ کے بعد جہاز کا ایک انجن بھی مرکزی حصے سے ٹوٹ چکا تھا۔ مسافروں کی یہ خوش قسمتی تھی کہ ایسے میں ہوائی جہاز کو آگ نے لپیٹ میں نہیں لے لیا۔

ابھی تک یہ معلوم نہیں ہو سکا ہے کہ بوئنگ طیارے کے ساتھ ایسا کیوں کر ہوا ہے۔ ابتدائی تفتیشی عمل شروع کر دیا گیا ہے۔ ایک عینی شاہد خاتون اسٹیفنی ٹرنر کا کہنا ہے کہ لینڈنگ کے وقت جہاز کا اترنے کا زاویہ بھی غلط تھا اور اسے محسوس ہو رہا تھا کہ بہت بڑا حادثہ ہونے والا ہے۔ ٹرنر کے مطابق طیارے کی لینڈنگ پوزیشن سے یہ خدشہ لاحق ہو گیا تھا کہ بہت ساری اموات ہونے والی ہیں۔ کچھ اور مسافروں کے مطابق لینڈنگ کے وقت ہوائی جہاز دھویں کا بادل دکھائی دے رہا تھا۔

سان فرانسسکو ہوائی اڈے پر آسیانہ ہوائی کمپنی کے ترجمان ڈوگ یاکیل کے پاس بھی ٹھوس معلومات موجود نہیں تھیں۔ سان فرانسسکو شہر کے جنرل ہسپتال کے ترجمان نے بتایا ہے کہ زخمیوں کی عمریں 20 برس سے 40 سال تک ہیں۔ ترجمان نے زخمی ہونے والے بچوں کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کی ہے۔

ادھر بوئنگ کمپنی نے طیارے کی تفتیش میں معاونت کا اعلان کیا ہے۔ آسیانہ ہوائی کمپنی کے طیارے کے حادثے کے بعد سان فرانسسکو کے ہوائی اڈے پر اترنے والی کئی پروازوں کو منسوخ یا قریبی ہوائی اڈوں کی جانب بھیج دیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں