.

ذاتی مفاد کے لئے مذہب کا استعمال مسترد کرتے ہیں: سعودی عرب

رمضان المبارک کے موقع پر سعودی قیادت کا تہنیتی پیغام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز اور ولی عہد سلمان بن عبدالعزیز کا کہنا ہے کہ ہم ذاتی مقاصد کے لئے مذہب کے استعمال کو مسترد کرتے ہیں۔ ناکامی اور تنازعات کی طرف لیجانے والی سیاسی جماعتوں سے تعلق بھی اسی زمرے میں آتا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے رمضان المبارک کی آمد پر مسلمانوں کے نام اپنے تہنیتی پیغام میں کیا۔ سرکاری ٹیلی ویژن پر یہ پیغام سعودی عرب کے وزیر اطلاعات اور ثقافت عبدالعزیز خوجہ نے پڑھ کر سنایا۔

"سعودی عرب مذہب کو انتہا پسندی اورعبث پھیلانے والوں کے ذاتی مقاصد کی ڈھال کبھی نہیں بننے دے گا۔ ایسے لوگ اپنی غلط تشریحات اور اقدامات کے ذریعے اسلام کا روشن چہرہ داغ دار کر رہے ہیں۔

جدہ سے شائع ہونے والے مٶقر اخبار'سعودی گزٹ' کے مطابق دونوں سعودی رہنماٶں نے یہ بات زور دیکر کہی کہ اسلام کسی ایک نظریئے یا سوچ کے نام پر تقسیم کی اجازت نہیں دیتا۔

انہوں نے اندھیرے میں ٹامک ٹوئیاں مارنے والی جماعتوں کو خبردار کیا وہ ملک میں اضطراب پیدا کرنے کی کوششوں کو کسی نصب العین کی خدمت کا ذریعہ نہ سمجھیں۔ "سعودی عرب کا واضح اعلان ہے کہ وہ کسی طور پر مملکت میں ایسے افراد کو قبول نہیں کرے گا جن کا کسی جماعت سے تعلق ہو گا۔"

اخبار کے مطابق سعودی حکمرانوں نے شامی عوام پر مسلط آفت کے جلد ٹلنے کی دعا کرتے ہوئے بین الاقوامی برادری پر زور دیا کہ وہ اس سلسلے میں اپنی اخلاقی ذمہ داریاں پوری کریں۔