ترک جوڑے کو اپنی بیٹی کا نام 'کردستان' رکھنے کی اجازت

ماتحت عدالت کا 'کردستان' نام رکھنے پر پابندی کا فیصلہ کالعدم قرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ترکی کی اعلی عدالت نے ایک کردستانی جوڑنے کو اپنی بیٹی کا نام 'کردستان' رکھنے کی اجازت دے دی ہے۔ مقامی میڈیا کے مطابق لفظ 'کردستان' بغاوت کا ہم معنی ہونے کے باعث ترکی میں ممنوع ہے۔

ترک خبر رساں ادارے 'دوگان' کے مطابق ترکی کی اپیلٹ کورٹ نے ماتحت عدالت کے اس فیصلے کو منسوخ کر دیا ہے جس میں یونس اور ایلف توپراک نامی جوڑے کو اپنی بیٹی کا نام کردستان رکھنے سے منع کر دیا گیا تھا۔ کردستان کو کرد آبادی اپنے آبائی وطن قرار دیتے ہیں۔

ماتحت عدالت نے قرار دیا تھا کہ "بچی کا نام کردستان رکھنا 'معاشرے کی توہین' ہے، اس لئے والدین اپنی بیٹی کا نام تبدیل کر کے ہیلن رکھ لیں۔ ہیلن نام ترکی کے جنوب مغربی صوبے سینلیورفہ میں عمومی طور پر رکھا جانے والا نام ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں