"دل لگی" کے نام پر ٹی وی چینل نے معصوم بچی آن ائر رلا دی

پروگرام کے پروڈیوسرز کے خلاف سعودی عرب میں ٹوئٹر پر مہم کا آغاز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے ایک ٹی وی چینل کو اس وقت عوامی تنقید اورغم و غصے کا سامنا کرنا پڑاجب محض ٹی وی پروگرام کا شوخی اور شرارت کے تاثر بنانے کے لیے ہزاروں ناظرین کے سامنے ایک دس سالہ بچی کو اس قدر ''زچ'' کیا گیا کہ وہ پھوٹ پھوٹ کر رونے لگی۔ ناظرین کی بڑی تعداد نے معصوم بچی کے ساتھ اس سلوک پر ٹی وی انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ پروگرام پروڈیوسروں کو سزا دیں۔

تفصیلات کے مطابق "اجیال" نامی سعودی ایک نجی ٹی وی شوخی شرارت کا ماحول بنانے کے لیے بچوں کا ایک پروگرام پیش کرتا ہے، جو رامضان المبارک میں بھی جاری ہے تاہم ایک تازہ پروگرام کے دوران مہمان کے طور پر بلائی گئی دس سالہ معصوم بچی کو ایک ایسے کالر کے تندو تیز اور شرارتی سوالوں کا جواب دینا پڑا کہ معصوم بچی پروگرام کے دوران اونچی آواز میں آنسووں کے ساتھ رونے پر مجبور ہو گئِی۔

اس پر ناظرین نے بھی بچی کے ساتھ ہونے والے اس سلوک بچوں کے حقوق کے منافی قرار دیا اور سوشل میڈیا پر ناظرین نے پروگرام کے ذمہ دارں کے خلاف ایک مہم شروع کر دی، جبکہ میڈیا معاملات کو 'ریگولیٹ' کرنے والے حکام اپیل کی گئِی ہے کہ محض کچھ لوگوں کو ہنسانے کے لیے دس سالہ معصوم بچی کو رلانا ایک سنگدلانہ حرکت ہے۔ اس لیے پروگرام کے ذمہ دار افراد کو معطل کیا جائے۔کیونکہ یہ لوگ بچوں کے جذبات مجروح کرنے اور ان کی توہین کے مرتکب ہوئے ہیں

روزنامہ الوطن کے معروف کالم نگار صلاح الشیخی نے "العربیہ" سے بات کرتے ہوئے کہا اپنے ناظرین اور حاظرین کو ہنسانے کے لیے بچوں کو رلا دینا بنیادی حقوق اطفال کے خلاف ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں