سعودی عرب: قیدیوں اور اہل خانہ کے درمیان "ویڈیو کانفرنس" رابطے کی سہولت

سہولت سے جیلوں میں ملاقاتیوں کا رش کم کرنے میں مدد ملے گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی جیلوں میں زیرحراست افراد اپنے اہل خانہ سے "ویڈیو کانفرنس" کے ذریعے رابطہ کر سکیں گے۔ اب سعودی عرب کے مختلف مقامات پر بنائی گئی جیلوں میں قید افراد دور دراز شہروں میں مقیم اپنے اہل خانہ اور عزیز و اقارب سے ویڈیو کانفرنس کے ذریعے ورچیوئل ملاقات کر سکیں گے۔

اس سے پہلے کی وزارت داخلہ نے شہریوں کو وزیر داخلہ سے ویڈیو کانفرنس کے ذریعے رابطے کی سہولت فراہم کی تھی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اسیران کی اہل خانہ سے ویڈیو کانفرنس کے ذریعے ملاقات کی سہولت کے علاوہ براہ راست ٹیلی فون، آن لائن ریکارڈ شدہ آڈیو پیغامات اور ای میل کی بھی سہولت فراہم کی ہے۔

حکومت کے اس اقدام سے نہ صرف جیلوں میں ملاقاتیوں کے رش میں کمی آئے گی بلکہ ملاقات کے لیے بار بار دور دراز سے سفر کی زحمت بھی ختم ہو جائے گی۔ رپورٹ کے مطابق جیلوں میں ملاقات کے لیے آنے والوں کو اپنی چیکنگ اور تلاشی کے حوالے سے بھی جیل عملے سے شکایات رہتی ہیں۔ ویڈیو کانفرنس رابطے کی سہولت سے شہریوں کی ان شکایات کا بھی کافی حد تک ازالہ ہو جائے گا۔

خیال رہے کہ قیدیوں کی اپنے اہل خانہ سے رابطے کے لیے ویڈیو کانفرنس کی سہولت بعض یورپی ملکوں میں میسر ہے لیکن سعودی عرب میں یہ ٹکنالوجی پہلی مرتبہ استعمال کی جا رہی ہے۔ انسانی حقوق کی عالمی تنظیمیوں قیدیوں کواس سہولت کی فراہمی کی پرزور حمایت کرتی آ رہی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں