.

ترک فوج کا اپنے سابق سربراہ و دیگر کے منصفانہ ٹرائل کا مطالبہ

سرکاری ویب سائٹ پر فوج میں پائی جانے والی تشویش کا بھی اظہار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک مسلح افواج نے استنبول کی 13 ویں اعلی فوجداری عدالت میں سابق فوجی سربراہ، ریٹائرڈ جرنیلوں اور درجنوں دیگر افراد کے خلاف مشہور''ارگینکون کیس'' کے ٹرائل اور فیصلوں کے منصفانہ ہونے بارے میں توقع ظاہر کی ہے۔ منگل کے روز فوج کی سرکاری ویب سائٹ پر شائع کیے گئے بیان میں اس حساس معاملے پر فوج کی براہ راست توقعات اور بالواسطہ تحفظات کا اظہار کیا گیا ہے۔

فوج کے بیان میں کہا گیا ہے کہ ''ارگیبکون کیس میں عدالت نے چند حاضر ڈیوٹی اور بعض ریٹائرڈ لوگوں کے بارے میں ایک غلط فیصلہ دیا ہے۔ اس مشہور کیس میں فوج کے حاضر ڈیوٹی اور ریٹائرڈ ارکان کے بارے میں تفتیش اور استغاثے کے حوالے سے غلط فہمیوں کو تحمل اور دانش مندی کے ساتھ نظر انداز کرنا چاہیے تھا۔

ترک فوج نے دو ٹوک انداز میں کہا ہے کہ ہم شدت سے محسوس کرتے ہیں کہ ہمارے فوجی بھائیوں میں غم پایا جاتا ہے کیونکہ ان میں کئی ایسے ہیں جن کے ساتھ مل کر کام کیا ہے، اس صورتحال کہ جس میں آج کے دن اور بعد میں قانون کی حکمرانی کے لیے جس طرح کی عزت درکار ہے، ہم یقین رکھتے ہیں کہ منصفانہ ٹرائل کے اصولوں کے تحت ٹرائل منصفانہ فیصلے پر منتج ہو گا۔