.

برطانوی جیلوں میں قید مسلمانوں میں عید تحائف کی تقسیم

قیدیوں کے لیے حلال مٹھائی، نماز کی کتاب اور عید کارڈز پر مشتمل پیک کی تیاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لندن میں قائم ایک خیراتی ادارہ عیدالفطر کے موقع پر برطانوی جیلوں میں بند چار سو مسلم قیدیوں میں مختلف اشیاء پر مشتمل تھیلے تحفے کے طور پر تقسیم کررہا ہے۔

اسلامی انسانی حقوق کمیشن کے سربراہ عابد چودھری کا کہنا ہے کہ انھیں گذشتہ سال مسلم قیدیوں میں عید کے موقع پر تحائف تقسیم کرنے کا خیال آیا تھا۔ان کے بہ قول:''مسلم قیدی کمیونٹی میں الگ تھلگ ہوتے ہیں۔ وہ اپنے مذہبی کیلنڈر کے اعتبار سے بھی الگ تھلگ ہوتے ہیں۔ یہ دراصل ان کے ساتھ رابطے کا ایک چھوٹا سا ذریعہ ہے''۔

برطانیہ کی چار جیلوں میں قید چار سو مسلمانوں میں عید کے یہ پیک تقسیم کیے جارہے ہیں۔ ایک پیک کی لاگت قریباً تین ڈالرز آئی ہے اور اس رقم کو اسلامی انسانی حقوق کمیشن کو ملنے والے عطیات سے پورا کیا گیا ہے۔ تنظیم نے مسلم کمیونٹی کے ارکان سے کہا ہے کہ وہ ان کے خیراتی کام میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں اور قیدیوں میں تحائف کی تقسیم کے لیے عطیات دیں۔

ان پیکٹوں میں وہی چیزیں شامل کی گئی ہیں جن کو جیلوں میں قیدیوں کو مہیا کیا جاسکتا ہے۔ان میں حلال مٹھائیاں، چیونگم، جیبی سائز کی نماز کی کتاب اور عید کارڈز شامل ہیں جنھیں قیدی اپنے پیاروں کو بھیج سکتے ہیں۔

برطانوی جیل سروس کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ''جیل سروس نے تمام عقیدوں کے پیروکاروں کی مذہبی ضروریات کو پورا کرنے کا عزم کررکھا ہے اور گذشتہ چند برسوں سے متعدد خیراتی ادارے مسلم قیدیوں میں عید پیکٹوں کو تقسیم کررہے ہیں''۔

واضح رہے کہ 2011ء کی مردم شماری کے مطابق برطانیہ کی کل آبادی چھے کروڑ بیس لاکھ نفوس پر مشتمل ہے۔ ان میں قریباً ستائیس لاکھ مسلمان ہیں۔ برطانوی پارلیمان میں پیش کردہ ایک رپورٹ کے مطابق ملک کی جیلوں میں قید مسلمانوں کی تعداد پہلی مرتبہ گیارہ ہزار سے بڑھ گئی ہے۔