.

یمنی حکومت کا تیل اور گیس کی تنصیبات پرحملوں کی سازش ناکام بنانے کا اعلان

امریکی ڈرون حملے میں القاعدہ کے 6 جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں امریکا کے خفیہ ادارے سی آئی اے کے بغیر پائلٹ جاسوس طیارے کے میزائل حملے میں القاعدہ کے چھے مشتبہ جنگجو ہلاک ہو گئے ہیں جبکہ یمنی حکومت نے جنگجوؤں کی تیل اور گیس کی تنصیبات پر حملوں کی سازش ناکام بنانے کا اعلان کیا ہے۔

عینی شاہدین اور مقامی حکام کے مطابق امریکی ڈرون نے جنوبی صوبے شیبوۃ کے دارالحکومت عتق سے شمال میں واقع دوردراز علاقے میں دو گاڑیوں پر چھے میزائل داغے ہیں،حملے میں دونوں گاڑیاں تباہ ہوگئی ہیں اور ان میں سوار افراد کی لاشیں جل کر ناقابل شناخت ہوگئی ہیں۔

یمن میں گذشتہ دوہفتے کے دوران امریکا کا یہ پانچواں میزائل حملہ ہے اور یہ جنگجوؤں کی جانب سے مشرق وسطیٰ میں مغربی مفادات پر حملوں کی دھمکیوں کے بعد کیا گیا ہے۔اس سے ایک روز پہلے ہی امریکا اور برطانیہ نے یمن سے اپنے سفارتی عملے کو واپس بلا لیا تھا۔28جولائی کے بعد یمن میں امریکی ڈرون حملوں میں کم سے کم بیس مشتبہ جنگجو مارے جاچکے ہیں۔

امریکی ذرائع کے مطابق القاعدہ کے سربراہ ڈاکٹَر ایمن الظواہری اور تنظیم کی یمنی شاخ کے درمیان ٹیلی مواصلاتی رابطے کا پتا چلنے کے بعد گذشتہ ہفتے انتباہ جاری کیا گیا تھا اور علاقے کے متعدد ممالک میں امریکی سفارت خانوں کو بند کردیا گیا تھا۔

یمنی حکومت نے منگل کو پچیس مبینہ دہشت گردوں کی ایک فہرست جاری کی تھی جو اس کے بہ قول اسی ہفتے عید الفطر کی تعطیلات کے موقع صوبہ حضر موت میں حملوں کی منصوبہ بندی کررہے تھے۔یمنی حکومت نے ان مطلوب افراد کی گرفتاری کے لیے پچاس لاکھ یمنی ریال کی انعامی رقم کا بھی اعلان کیا ہے۔

درایں اثناء یمنی سکیورٹی فورسز نے القاعدہ کی جانب سے ملک کے مشرقی علاقے میں تیل اور گیس کی تنصیبات اور ایک صوبائی دارالحکومت پر قبضے کی سازش کو ناکام بنا دیا ہے۔

یمنی وزیراعظم محمد سالم بیسندوہ کے پریس مشیر راجح بادی نے ایک بیان میں بتایا ہے کہ اس منصوبے میں یمنی فوج کی وردیوں میں ملبوس القاعدہ کے بیسیوں جنگجوؤں نے حصہ لینا تھا اورصوبہ حضرموت اور بلہاف میں واقع گیس کی تنصیبات کو 27 رمضان کی شب نشانہ بنانا تھا لیکن سکیورٹی فورسز کی اضافی نفری تعینات کرکے اس سازش کو ناکام بنا دیا گیا ہے۔