.

مراکش اورامریکا کی مشترکہ فوجی مشقوں پر حملے کی سازش ناکام

دو اہم ہوائی اڈے دہشت گردوں کی ہٹ لسٹ پر تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شمال افریقی ملک مراکش کے ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ پولیس نے امریکا اور مراکش کی مشترکہ فوجی مشقوں کے دوران دہشت گردی کی مبینہ سازش ناکام بناتے ہوئے ایک خفیہ گروہ کو حراست میں لیا ہے۔

ذرائع کے مطابق دہشت گرد دونوں ملکوں کے اشتراک سےجنوب مغربی شہر طنطان میں اپریل میں ہونے والی سالانہ فوجی مشقوں کے دوران بارود سے بھری کاروں اور خودکش بمباروں کے ذریعے حملے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔

مراکش سے شائع ہونے والے عربی اخبار "الصباح" کی رپورٹ کے مطابق دہشت گردوں نے اپنی منصوبہ بندی کا ایک تصویری خاکہ مغرب اسلامی میں سرگرم القاعدہ کے زیراستعمال ایک ویب سائیٹ پرشائع کیا تھا، جس کے بعد مراکش کی پولیس نے کارروائی کرکے سات دہشت گردوں کو گرفتار کیا ہے۔ ملزمان کو انسداد دہشت گردی کی ایک عدالت میں پیش بھی کیا گیا۔

دوران تفتیش معلوم ہوا ہے کہ مراکش میں دہشت گردوں کا نشانہ صرف مشترکہ فوجی مشقیں ہی نہیں بلکہ کئی اوراہم اہداف بھی ان کی ہٹ لسٹ پر تھے۔ جن میں جنوب مغربی مراکش کے شہر کلمیم کا ہوائی اڈہ اور مراکش کی 'آلون' جیل پرحملہ کرکے اپنے شدت پسند ساتھیوں کی رہائی بھی شامل تھی۔ شدت پسندوں کا کہنا ہے کہ وہ کلمیم ہوائی اڈے پر حملہ کرکے فرانسیسی ہوائی جہازوں کو نقصان پہنچانا چاہتے تھے کیونکہ اسی ہوائی اڈے سے گذشتہ برس فرانسیسی جنگی جہاز اڑانے بھرنے کے بعد مالی میں اسلام پسندوں پرحملے کرتے تھے۔

حکام کے مطابق حراست میں لیے گئے دہشت گردوں نے بتایا کہ وہ مراکش کے شمالی شہرالناظورکے پہاڑوں میں اپنے تربیتی مراکز قائم کرنے کی بھی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔ زیرحراست ملزمان نے مغرب اسلامی میں سرگرم شدت پسند گروپوں اور القاعدہ سے روابط کا بھی اعتراف کیا۔