.

شام میں کیمیائی حملہ سخت ردعمل کا متقاضی ہے: نیٹو

خاموش بیٹھے رہنے سے دنیا کے آمروں کو خطرناک پیغام جائے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

معاہدۂ شمالی اوقیانوس کی تنظیم نیٹو کے سیکرٹری جنرل آندرس فوگ راسموسین نے کہا ہے کہ شام میں 21 اگست کو کیمیائی ہتھیاروں کے حملے پر سخت عالمی ردعمل کا اظہار کیا جانا چاہیے۔

راسموسین نے برسلز میں سوموار کو نیوز کانفرنس میں کہا کہ ''ہمیں یقین ہے ان ناقابل بیان اقدامات کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا جن کے نتیجے میں سیکڑوں مرد، خواتین اور بچے مارے گئے ہیں''۔

ان کا کہنا تھا: ''میرے خیال میں ایک سمجھوتا موجود ہے اور ہمیں مستقبل میں اس طرح کے حملوں سے بچنے کے لیے پختہ بین الاقوامی ردعمل کی ضرورت ہے لیکن اگر ہم کوئی ردعمل ظاہر نہیں کرتے اور ایسے ہی خاموش بیٹھے رہتے ہیں تو پھر دنیا بھر کے آمروں کو خطرناک پیغام جائے گا''۔