.

پوپ فرانسس کی اپیل پر شام کیلیے امن کی خصوصی دعائیں

سنی مفتی اعظم احمد شام بدرالدین حسون نے بھی حمایت کی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

رومن کیتھولک چرچ کے اپیل پر شام میں امن اور ہر قسم کی اندرونی و بیرونی فوجی مداخلت کے خلاف آج ہفتے کے رو روزہ رکھنے اور دعا کا عالمی دن منا یا جا رہا ۔ اس موقع ہر پوپ فرانسس نے ویٹیکن سٹی کے سینٹ پیٹرز سکوائر پر ایک بڑے مظاہرے کی قیادت کا بھِی اعلان کیا ہے۔

ارجنٹائن سے تعلق رکھنے والے پوپ فرانسس نے مسیحیوں، اور دوسرے عقیدوں میں تعلق رکھنے والوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ امن کے لئے ہونے والے اس کاوش کا حصہ بنیں۔

خبررساں ادارے اے ایف پی کے مطابق شام میں سنی مسلمانوں کے رہنما مفتی اعظم احمد بدرالدین حسون نے شامیوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ دعاوں میں شامل ہوں اور اس کے علاوہ آرتھوڈوکس چرچ کے روحانی رہنما برتلماوس اول کا کہنا ہے کہ وہ اس دن کو منانے کی حمایت کرتے ہیں۔

خبررساں ادارے کے مطابق ویٹیکن میں چار گھنٹوں کے لئے دعائیہ سیشن ہو گا اور اس کے علاوہ دنیا بھر میں بغداد، بیت المقدس، ممبئی، بیونس ایریز، واشنگٹن ڈی سی اور بیروت میں بھی دعائیہ سیشن کروایا جائے گا.

دنیا بھر میں عیسائیت پر یقین رکھنے والے بعض گروپ امریکی کانگریس کے اجلاس میں شام کے خلاف حملے کا ایشو زیر بحث آنے سے پہلے پوپ کی اس اپیل کو اہم قرار دیتے ہیں۔ ایسی ہی اپیل آنجہانی پوپ جون پال دوئم نے 11 ستمبر 2001ء کے امریکہ پر حملے کے بعد بھی کی تھی جس میں انسانیت کی بہتری اور امن کی خاطر خصوصی دعائیں کروائی گئی تھیں، تاکہ دنیا میں مزید خونریزی نہ ہو۔