.

فیس بُک پر چیٹ: ترک کے ہاتھوں برطانوی محبوبہ قتل

برطانوی خاتون سعودی عرب میں کسی سے بات کرنے پر جان گنوا بیٹھی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انٹرنیٹ پر چیٹنگ کے نتیجے میں ہنستے بستے گھروں کے اجڑنے اور شادیوں کے ٹوٹنے کی خبریں آئے دن منظرعام پر آتی رہتی ہیں لیکن ترکی میں سماجی روابط کی ویب سائٹ فیس بُک پر چیٹ کرنے کے نتیجے میں ایک برطانوی خاتون اپنی جان گنوا بیٹھی ہے۔

ترکی کے جنوب مغربی علاقے دیلان میں ایک ترک مالی ویلی عکر نے اپنی برطانوی مالکہ اور محبوبہ کیتھرین این بری کو فیس بُک پر چیٹنگ کرتے ہوئے پایا اور پھر اس کو توتکار کے بعد گولی مار کر قتل کردیا ہے۔

برطانوی اخبار ڈیلی میل میں شائع شدہ رپورٹ کے مطابق یہ واضح نہیں ہوا کہ مقتولہ بری اپنے بیٹے کے لاپتا والد سے گفتگو کررہی تھی یا اس کا کوئی اور مخاطب تھا۔ عکر نے مبینہ طور پر اس برطانوی خاتون کو اس کے ولا میں خاندان کی موجودگی ہی میں اس کی سالگرہ کے موقع پر گولی ماری ہے۔ حملے میں بری کا چوبیس سالہ بیٹا ایلکس اور والدہ سیسلا بری زخمی ہوگئیں۔

زخمی ایلکس نے بتایا کہ ''عکر نے بندوق اپنے کندھے پر رکھی اور مجھے کہا کہ میں والدہ اور نانی کے کمرے میں اس کے ساتھ جاؤں۔ اس دوران ان دونوں نے مجھے قاتل کے ساتھ باتیں کرتے ہوئے دیکھا تو خود کو ایک کمرے میں بند کر لیا لیکن اس نے والدہ پر باتھ روم میں گھس کر فائرنگ کردی''۔

عکر نے مبینہ طور پر اس خاندان کو اسی ہفتے کے آغاز پر دھمکی دی تھی جس پر پولیس نے اس کو گرفتار کر لیا لیکن بعد میں رہا کردیا۔ اس نے 2010ء میں اس برطانوی خاتون سے شادی کے لیے اپنی اسکاٹش بیوی کو طلاق دے دی تھی لیکن ان کا رومانس ایک الم ناک واقعے پر منتج ہوا ہے۔

ترکی وزارت ثقافت اور سیاحت نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''برطانوی شہری کیتھرین این بری کی فائرنگ کے نتیجے میں ہلاکت اور اس کی والدہ سیسلا بری اور بیٹے الیگزینڈر بری کے زخمی ہونے کے واقعہ کی مکمل تحقیقات کی جارہی ہے اور اس کا مرکزی مشتبہ ملزم اس وقت زیرحراست ہے''۔