سات کھرب 76 ارب ریال ٹیکس اور زکواۃ سعودی قومی خزانے میں جمع

85 فیصد رقم آئل کمپنیوں سے ٹیکسوں کی مد میں لی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے محکمہ زکواۃ اور انکم ٹیکس کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ گذشتہ برس حکومت کو ان دو شعبوں سے مجموعی طور پر سات کھرب، 76 ارب ریال کی خطیر رقم وصول ہوئی ہے۔ اس خطیر رقم میں 85 فی صد آئل کمپنیوں سے ٹیکسوں کی مد میں وصول ہونے والی رقوم شامل ہیں۔ آئل کمپنیوں سے ٹیکسوں کی مد میں 75 کھرب اور 23 ارب تین کروڑ ریال وصول کیے گئے۔

اس امر کا اظہار محکمہ زکواۃ وانکم ٹیکس کے ڈائریکٹر جنرل ابراہیم المفلح نے "العربیہ" ٹی وی سے گفتگو کے دوران کیا۔ انہوں نے بتایا کہ عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں میں اضافہ گذشتہ برس آئل فرموں سے ٹیکسوں میں اضافے کا باعث بنا اور قومی خزانے میں ایک بڑی رقم جمع ہوگئی تھی۔ رواں سال اس میں مزید اضافے کی توقع کی جا رہی ہے۔

ابراہیم المفلح کا کہنا تھا کہ پچاسی فی صد ٹیکس آئل فرموں کی جانب سے حاصل ہوا۔ غیر ملکی کمپنیوں کے ٹیکسوں سے کل رقم کا 25 فی صد اس کےعلاوہ ہے۔

قبل ازیں سعودی محکمہ اور زکواۃ و انکم ٹیکس کی جانب سے ایک رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ گذشتہ برس سات کھرب، چہتر ارب ریال کی رقم قومی خزانے میں جمع کرائی گئی ہے۔ سعودی عرب میں ٹیکس اور زکواۃ کی مد میں یہ اب تک کا ایک ریکارڈ ہے۔ اس رقم میں تجارتی سامان پر زکواۃ کے علاوہ جرمانوں کی رقوم بھی شامل ہیں۔

رپورٹ کے مطابق حکومت کو مالی سال 2012ء میں آئل اور دیگر فرموں کی جانب سے 75 کھرب، 23 ارب ریال ٹیکس فراہم کیا گیا۔ جرمانوں اور دیگر کٹوتیوں کی مجموعی رقم 12 ارب 65 کروڑ ریال جبکہ تجارتی سامان پر زکواۃ کی مد میں 11 ارب ریال جمع کیے گئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں