گوانتا نامو: نائن الیون کیس، عدالتی کمپیوٹر میں خرابی آ گئی

خالد شیخ و دیگر کیخلاف سماعت اگلے سال تک ملتوی ہو سکتی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

گوانتا نامو بے کی امریکی جیل میں قائم جنگی جرائم سے متعلق عدالت نائن الیون کیس میں خالد الشیخ اور دیگر چار افراد کے خلاف سماعت اگلے سال تک ملتوی کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ کرے گی۔ وکیل صفائی نے عدالت میں موقف اختیار کیا تھا کہ کمپیوٹرسسٹم کے بعض تکنیکی مسائل کی وجہ سے ان کے کام میں دشواری پیش آ رہی ہے۔

جنگی جرائم کی عدالت اس بارے میں معاملے کا آج جائزہ لے گی۔ واضح رہے یہ عدالت القاعدہ کے ارکان پر مقدمہ چلا رہی ہے۔ فرد جر عائد ہونے کی صورت خالد الشیخ اور ان کے ساتھیوں کے خلاف فرد جرم کے سامنے آنے کے بعد انہیں وسیع پیمانے پر قتل، دہشت گردی اور طیارے اغواء کرنے کے جرم میں سزا کا سامنا ہو سکتا ہے۔

23 اگست کو عدالتی سماعت کے موقع پر وکیل صفائی نے موقف اختیار کیا تھا کہ کیس کی سماعت سے متعلق ای میلز اور فائلیں کمپیوٹر سسٹم سے صاف ہو جاتی ہیں۔ اس پر عدالت نے وکیل صفائِ کو پراسیکیوٹرز کے کمپیوٹرز اور فائلیں استعمال کرنے کا مشور دیا تھا۔

اس سلسلے میں پینٹاگان کے ماہرین نے اس ہفتے میں دیکھنا تھا کہ یہ مسئلہ کس حد تک ہے اور اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے کتنا وقت درکار ہو گا ۔ تکنیکی ماہرین کا کہنا تھا کہ اس مسلے کے تدارک کے لیے کم از کم تین ہفتے درکار ہوں گے۔

تاہم ماہ اگست میں ہونے والی سماعت سے ابھی تک کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے ۔ اس کی ایک اہم وجہ یہ ہے اس سے پینٹاگان کےاپنے کمپیوٹرز کی راز داری پر حرف آسکتا ہے۔ اس صورت حال میں ملزمان کے وکیل نے مقدمہ کی سماعت روکنے کی استدعا کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں