.

بیوی سے ڈرتا ہوں، اسی لیے سگریٹ نوشی چھوڑ دی: اوباما

دنیا کی واحد سپر پاورکے صدر بھی اہلیہ سے ڈرنے والے نکلے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مشہور عالمی شخصیات کے اپنی بیویوں سے ڈرنے کے قصے تو سنتے، پڑھتے رہتے ہیں لیکن اب ایک نئی حیرت انگیز اطلاع سامنے آئی ہے اور وہ یہ کہ خود کو دنیا کا سب سے طاقتورسمجھنے والا لیڈر بھی اس خوف سے مبّرا نہیں ہے اورواحد سپر پاورامریکا کے صدر براک اوباما نے اعتراف کیا ہے کہ وہ اپنی بیگم مشعل سے ڈرتے ہیں۔

براک اوباما صاحب اپنی بیگم سے ڈرتے ہی نہیں ہیں بلکہ انھوں نے اس خوف سے سگریٹ نوشی بھی ترک کردی ہے۔انھوں نے یہ اعتراف اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس کے موقع پر کیا ہے۔وہ نیویارک میں سول سوسائٹی کی اہمیت کے موضوع پرایک مذاکرے میں شریک تھے۔اس دوران اپنی تقریر کے بعد انھوں نے ہلکی پھلکی گفتگو کی اور اپنی نجی زندگی کے بعض واقعات بیان کیے۔

سی این این نے اس گفتگو کو ریکارڈ کر لیا۔اس تقریب کے بعد وہ اپنی نشست سے اٹھے اور اپنے ساتھ بیٹھے شخص سے مخاطب ہو کر کہا کہ کیا انھوں نے سگریٹ نوشی چھوڑ دی ہے۔پھر وہ اس شخص کے جواب سے قبل ہی خود یوں گویا ہوئے:''میں نے غالباً گذشتہ چھے سال سے سگریٹ کا کش نہیں لگایا کیونکہ میں اپنی بیوی سے ڈرتا ہوں''۔

براک اوباما اپنے صحت مندانہ طرز زندگی اور چاق چوبند شخصیت کے حوالےسے جانے جاتے ہیں لیکن سگریٹ ان کی کمزوری ہیں اور اس کا ذکر انھوں نے اپنی یادداشتوں ''میرے والد کے خواب'' میں بھی کیا ہے۔

انھوں نے؁ 2008ء میں جب پہلی مرتبہ صدارتی انتخاب لڑنے کے لیے مہم شروع کی تو ان کی سگریٹ نوشی کی عادت اور اس کو ترک کرنے کی کوشش امریکی میڈیا کا پسندیدہ موضوع تھی۔

انھوں نے امریکی صدارت سنبھالنے کے ایک سال کے بعد بتایا تھا کہ وہ سگریٹ نوشی سے 95 فی صد تک محفوظ ہوگئے ہیں۔تاہم انھوں نے اعتراف کیا کہ وہ بعض اوقات اس عادت سے مجبور ہوجاتے ہیں۔

دسمبر2010ء میں وائٹ ہاؤس کے ترجمان رابرٹ گبز نے بتایا تھا کہ''صدراوباما نے گذشتہ نوماہ سے سگریٹ نہیں پیا اور وہ کام کے تناؤ کے باوجود سگریٹ نوشی کو خیرباد کہنے کے لیے کوشاں ہیں''۔

واضح رہے کہ امریکا کی خاتون اوّل مشعل اوباما صحت عامہ کی بڑی علمبردار ہیں اور وہ اپنے شوہر کی سگریٹ نوشی کی عادت پر وہ ناپسندیدگی کا اظہار کرچکی ہیں۔ تاہم ان کا کہنا ہے کہ ان کے میاں صاحب نے اپنی دونوں بیٹیوں کے سامنے کبھی سگریٹ نہیں سلگایا۔

فروری 2011ء میں ایک موقع پر انھوں نے کہا تھا کہ صدر نے گذشتہ ایک سال سے سگریٹ نہیں پیا اور وہ ان سے اس معاملے میں کوئی سخت روی اختیار نہیں کرتی ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ ''جب کوئی شخص خود ہی ٹھیک کام کررہا ہے تو پھر آپ کو اس سے سختی سے پیش آنے کی ضرورت نہیں ہے''۔