براک اوباما کی حسن روحانی سے ٹیلی فون پر گفتگو

ایران کے جوہری پروگرام کا جامع حل ممکن ہے:امریکی صدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی صدر براک اوباما نے اپنے ایرانی ہم منصب حسن روحانی سے ٹیلی فون پر گفتگو کی ہے اور ان سے کہا ہے کہ ایران کے جوہری پروگرام کا ایک جامع حل ممکن ہے۔

صدر اوباما نے جمعہ کو فون پراس گفتگو کے بعد کہا کہ''ابھی ابھی میں نے اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر روحانی سے بات کی ہے اور ہم دونوں نے ایران کے جوہری پروگرام کے بارے میں کسی سمجھوتے تک پہنچنے کے لیے کی جانے والی کوششوں کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا ہے''۔

ایران نے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے کہ حسن روحانی نے براک اوباما سے فون پر گفتگو کی ہے اور دونوں لیڈروں نے تہران کے جوہری پروگرام پر جاری بحران کے خاتمے کے لیے کوششوں پربات کی ہے۔

ایرانی صدارت نے اپنی ویب سائٹ پر جاری کردہ بیان میں کہا ہے کہ ''دونوں لیڈروں نے جوہری تنازعے کے فوری حل کے لیے سیاسی عزم کی اہمیت پر زوردیا ہے۔اس کے علاوہ انھوں نے دوسرے علاقائی ایشوز کے حل کے لیے تعاون کی راہ ہموار کرنے کی ضرورت پربھی زوردیا ہے''۔

ایسوسی ایٹڈ پریس کی دونوں صدور کے درمیان ٹیلی فون پر ہونے والی گفتگو کے حوالے سے اطلاع کے مطابق''اوباما نے کہا کہ انھوں نے اور حسن روحانی دونوں نے اپنی اپنی ٹیموں کو ہدایت کی ہے کہ وہ جوہری تنازعے پر کسی سمجھوتے تک پہنچنے کے لیے کام کو تیز کریں''۔

انھوں نے کہا کہ امریکا اس ضمن میں اسرائیل سمیت اپنے تمام اتحادیوں سے قریبی رابطہ رکھے گا۔ان کا کہنا تھا کہ ٹیلی فون پر ہونے والی گفتگو پیش رفت کے امکان کو ظاہر کرتی ہے۔

ایرانی اور امریکی حکام اب اپنی بات چیت میں ایران کے جوہری پروگرام اور جوہری بم کی تیاری پر ہونے والی پیش رفت کا جائزہ لینے کے طریق کار پراپنی توجہ مرکوز کررہے ہیں۔امریکا،اسرائیل اور ان کے اتحادی ایران کے بارے میں یہ شُبہ ظاہر کرتے چلے آرہے ہیں کہ وہ جوہری بم تیار کرنا چاہتا ہے لیکن ایران اس الزام کی تردید کرتا چلا آرہا ہے اور اس کا کہنا ہے کہ اس کا جوہری پروگرام پُرامن مقاصد کے لیے ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں