.

صومالی الشباب کی کینیا میں جنگی کارروائیوں کی دھمکی

صومالیہ سے کینیائی فوجی واپس نہ بلانے کے ردعمل میں اعلان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

صومالیہ سے تعلق رکھنے والی اسلامی جنگجو تنظیم الشباب نے کینیا کے خلاف خانہ جنگی کا شکار اپنے ملک سے فوجی واپس نہ بلانے پر جنگی کارروائیوں کی دھمکی دی ہے۔

القاعدہ سے وابستہ الشباب نے گذشتہ ہفتے کینیا کے دارالحکومت نیروبی میں واقع ویسٹ گیٹ شاپنگ مال میں حملے کی ذمے داری قبول کی ہے۔اس حملے میں سڑسٹھ افراد ہلاک ہوگئے تھے اور انتالیس ابھی تک لاپتا ہیں۔

الشباب نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''ہم کینیا کو وہاں نشانہ بنائیں گے،جہاں اس کو سب سے زیادہ تکلیف ہو،اس کے شہروں کو قبرستان بنا دیں گے اور نیروبی میں خون کی ندیاں بہا دیں گے''۔

جنگجو تنظیم کا کہنا ہے کہ ''کینیائی حکومت کے صومالیہ میں اپنی درانداز فورس کو برقرار رکھنے کے فیصلے سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس نے ویسٹ گیٹ حملے سے کوئی سبق نہیں سیکھا ہے''۔اس نے خبردار کیا ہے کہ کینیا بے مثال عدم سلامتی ،خونریزی اور تباہی کو دعوت دے رہا ہے۔

کینیا کے صدر ہورو کینیاٹا نے منگل کو کہا تھا کہ ''صومالیہ میں فوجی امن وامان کے قیام کے لیے بھیجے گئے ہیں اور اس مقصد کے حصول تک وہ وہیں تعینات رہیں گے۔ہمیں ڈرایا دھماکا نہیں جاسکتا''۔

کینیا کی مسلح افواج کے فیصلے کے ردعمل میں الشباب نے کہا کہ وہ صومالی سرزمین سے جب تک آخری فوجی واپس نہیں چلا جاتا،اس وقت تک کینیا کے اندر شدت سے حملوں کا سلسلہ جاری رکھیں گے''۔تنظیم کا کہنا ہے کہ اسے دشمن کی جارحیت سے اپنی سرزمین اور عوام کے دفاع کا حق حاصل ہے۔