سعودی شہری دفاع کی یومیہ 3000 حجاج کرام کو"فرسٹ ایڈ" کی سہولت

برقی زینوں سے گرنے والوں اور بلڈ پریشر کے مریضوں کی فوری مدد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب میں حجاج کرام کی خدمت اور رہ نمائی میں مصروف دیگر اداروں میں سول ڈیفنس فورس بھی اللہ کے مہمانوں کی خدمت میں مصروف عمل ہے۔ محکمہ شہری دفاع کی جانب سے مسجد حرام میں روزانہ کم سے کم تین ہزار عازمین حج کو طبی سہولیات اور دیگر نوعیت کی امداد فراہم کی جا رہی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سول ڈینفس فورس کے کمانڈر کرنل عواد الصبحی نے میڈیا کو بتایا کہ ان کے محکمے کے سیکڑوں رضار حجاج کی خدمت پر مامور ہیں، جو روزانہ حرم شریف میں کم سے کم تین ہزار افراد کو "فرسٹ ایڈ" مہیا کر رہے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں کرنل الصبحی کا کہنا تھا کہ مسجد حرام کے اندر اور خانہ کعبہ کے آس پاس موجود حجاج کرام کو کئی قسم کی مدد درکار ہوتی ہے۔ حجاج کرام سیڑھیاں چڑھتے لڑکھڑانے سے گر جاتے ہیں۔ کوئی چھت سے گر پڑتا ہے۔ حجاج میں کئی ذیابیطس اور بلڈ پریشر کے مریض ہوتے ہیں جو اچانک چلتے چلتے رک جاتے ہیں۔ انہیں فوری طور پر سہارا دینے اور فرسٹ ایڈ فراہم کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ شہری دفاع کے رضاکار مختلف گروپوں میں بانٹے گئے ہیں جو مسجد حرام اور خانہ کعبہ کے ارد گرد اہم مقامات پر متمرکز ہیں۔ وہ حجاج کرام کی نقل وحرکت پر مسلسل نظر رکھتے ہیں اور کسی بھی ہنگامی ضرورت کے وقت فورا ان کی مدد کو پہنچ جاتے ہیں۔ مسجد حرام کی مختلف منزلوں تک جانے والے حجاج کرام جب برقی زینے استعمال کرتے ہیں تو وہ سنھبل نہیں پاتے اور گر پڑتے ہیں۔ لڑکھڑانے والے زیادہ ترعمر رسیدہ افراد ہوتے ہیں، جنہیں سنھبالا دینے کی فوری ضرورت ہوتی ہے۔

کرنل عواد الصبحی نے کہا کہ شہری دفاع کے 850 اہلکاروں کو 35 ایمبولینسیں بھی فراہم کی گئی ہیں۔ اس کےعلاوہ ہنگامی آکسیجن فراہم کرنے کے لیے ضروری آلات مہیا کیے گئے ہیں۔ ان اہلکاروں میں طبی عملہ اور معاون رضاکار بھی شامل ہیں جو ہلال احمر اور دیگر امدادی آپریشنل اداروں کے ساتھ بھی تعاون کر رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں