.

مراکش حکومت کا نیا ایڈیشن: کابینہ میں غیرمعمولی رد و بدل کا فیصلہ

اپوزیشن "سماج پارٹی" کو اہم وزارتیں ملنے کا امکان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افریقی ملک مراکش کی اسلام پسند حکومت نے اپوزیشن جماعتوں کو "رام" کرنے کے لیے کابینہ میں غیرمعمولی رد و بدل کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیراعظم عبدالالہ بن کیران کا کہنا ہے کہ قوم کابینہ کے نئے ایڈیشن کی خوشخبری اگلے ایک روز کے اندر اندر سنے گی۔ امکان ہے کہ کل جمعہ سے قبل ہی کابینہ کے نئے چہروں کا اعلان سامنے آجائے کیونکہ حکومتی اعلان کے مطابق نئے پارلیمانی سال کی رسم افتتاح سے قبل ہی نئی کابینہ کی تشکیل کا امکان ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حکمراں جماعت "جسٹس اینڈ ڈویلپمنٹ" اور اپوزیشن کی سوسائٹی پارٹی کے درمیان دو سال سے کشیدگی چلی آ رہی تھی۔ وزیراعظم بن کیران نے ملک کے فرمانروا شاہ محمد ششم سے صلاح مشورے کے بعد اپوزیشن کو بھی حکومت میں شراکت دار بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق فی الحال یہ واضح نہیں ہوسکا ہے کہ آیا شاہ مراکش حکومت کے نئے ایڈیشن کا اجلاس رباط میں بلائیں گے یا الرشیدیہ میں اس کا اعلان ہو گا، جہاں شاہ محمد ششم آج کل قیام پذیر ہیں۔

وزیراعظم عبدالالہ بن کیران کا کہنا ہے کہ جسٹس پارٹی کے سرکردہ رہ نما سعد الدین العثمانی کو وزارت خارجہ کے عہدے سے ہٹایا جا رہا ہے۔ ان کے علاوہ کئی دوسرے وزراء کا بھی رد و بدل کیا جائے گا اور یہ سارا عمل چند گھنٹوں کے اندر ہو گا۔

سعد الدین عثمانی دو سال سے وزارت خارجہ کے عہدے پر تعینات رہے ہیں۔ اس کےعلاوہ وہ جسٹس پارٹی کے سیکرٹری جنرل بھی ہیں۔رباط کے حکومتی ذرائع نے العربیہ کو بتایا ہے کہ سعدالدین عثمانی کی جگہ وزارت خارجہ کا قلم دان سوسائٹی پارٹی کے صلاح الدین مزوار کو سونپا جا سکتا ہے کیونکہ حکومت کے نئے ایڈیشن میں سوسائٹی پارٹی اپوزیشن میں نہیں بلکہ حکومتی اتحاد کا حصہ بننے والی ہے۔