یمن کے یوم آزادی پرعلیحدگی پسندوں کا عدن کی سڑکوں پر مارچ

جنوبی یمن کے علیحدگی پسند بات چیت نہیں، آزادی چاہتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن میں ہزاروں علیحدگی پسند ملک کے 36 ویں یوم آزادی کے موقع پرہفتے کے روزعلیحدگی کے حق میں نعرے لگاتے ہوئے عدن کی سڑکوں پر نکل آئے۔ تاہم فوج اور دیگر سکیورٹی اداروں کے اہلکاروں نے ان سے کوئی تعارض نہیں کیا بلکہ خاموشی سے علیحدگی کے مطالبے کے حق میں انہیں نعرے لگاتے اور تقریریں کرتے ہوئے دور سے دیکھتے رہے۔

یاد رہے 1967 کو آج کے دن جنوبی یمن سے آزادی حاصل کی تھی۔ علیحدگی کے حامی مظاہرین ملک کے جنوبی حصوں سے عدن میں واقع پریڈ گراونڈ میں جمع ہوئے تھے۔ مظاہرین نے سابقہ جنوبی یمن کے پرچم اور آزادی کے حق میں بینر اٹھائے ہوئے تھے۔

اس موقع پر بعض مظاہرین نے ملک میں سیاسی مکالمے اور نئے انتخابات کی کیلیے کوششوں کی مذمت کی اور کہا'' بات چیت نہیں آزادی چاہیے۔'' آزادی کے حق میں اس ریلی کی اپیل ماجد الشوائبی نے کی تھی اور بطور خاص یمن کے یوم آزادی کا انتخاب کیا تھا۔

اس موقع پر تحریک جنوب کی سپریم کونسل کے سر براہ حسن باوم کا کہنا تھا ''جنوبی یمن کے عوام ماہ اکتوبر میں انقلاب کا دن مناتے ہیں تاکہ ریاست کی از سر نو تشکیل ہو سکے۔''

یاد رہے 1990 میں شمالی اور جنوبی یمن کے اتحاد کے بعد 1994 میں جنوبی یمن اس اتحاد سے ٹوٹ گیا تھا، بعد ازاں مختصر خانہ جنگی کے نتیجے میں شمالی یمن کی افواج نے قبضہ کر لیا۔ اس لیے جنوبی یمن سے متعلق سوال ابھی تک تنازعے کا باعث ہے۔ اس وجہ سے یمن میں بات چیت کا عمل بھی مسائل کا شکار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں