.

بینک آف اسرائیل کی پہلی خاتون گورنر نے عہدہ سنبھال لیا

ڈاکٹر فلوگ چند ماہ بینک آف اسرائیل کی عبوری سربراہ رہی ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ڈاکٹر کارنت فلوگ کو وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے بینک آف اسرائیل کی پہلی خاتون گورنر نامزد کیا ہے۔ اس سے قبل ڈاکٹر فلوگ گزشتہ چار ماہ سے بینک کے سربراہ کی سیٹ خالی ہونے کی وجہ سے بینک کی عبوری سربراہ کے فرائض انجام دے رہی تھیں۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نتین یاہو اور وزیر خزانہ یائر لاپد نے ایک بیان میں نومنتخب گورنر کو مبارکباد دیتے ہوئے اس امید کا اظہار کیا کہ وہ اپنی ذمہ داریاں بخوبی سرانجام دیں گی اور عالمی معیشت میں اتار چڑھاو کے پیش نظر مستقبل میں اسرائیلی معیشت کی بہتری و ترقی کیلئے ہرممکن کوشش کریں گی۔

58 سالہ فلوگ نے30 جون 2011ء کو اسرائیلی بنک کے گورنر سٹینلی فشرکی 8 سالہ مدت ختم ہونے کے بعد بینک کی نائب گورنر کی ذمہ داری سنبھالی تھی۔ یاد رہے کہ نتین یاہو اور لاپد نے دو سینئیر ماہرین معاشیات، جیکب فرینکل اور لیو لینڈرمین کے ساتھ مشاورت کے بعد ڈاکٹر فلوگ کو گورنر کا قلمدان سونپا گیا۔

اسرائیلی بنک کی سربراہی کیلیے کل چار امیدواروں کے درمیان مقابلہ تھا جن میں سے ڈاکٹر فلوگ کو منتخب کیا گیا ہے۔ ان امیدواروں کی فہرست میں آرجنٹئینا کے سینٹرل بینک کے سابق گورنر ماریو بلیجر بھی شامل تھے۔

اسرائیل کے وزیر انصاف تذوی اكشتاين نے اس نامزدگی کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہیں خوشی ہے کہ ایک عورت کو ملک کے سب سے اہم اقتصادی عہدے پر فائز کرنے کا فیصلہ کیا ہے کہ پہلے ایسے عہدے پر صرف مردوں کو نامزد کیا جاتا تھا۔

اسکے ساتھ اسرائیلی خاتون وزیر لیونی نے اپنے فیس بک پیج پر ڈاکٹر فلوگ کے بطور گورنر منتخب ہونے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے لکھا کہ انہیں امید ہے کہ وہ اس عہدے کے تقاضے پورے کرنے میں کامیاب ہوں گی اور وہ یہ اس لیے نہیں کہہ رہی کہ وہ ایک خاتون ہیں بلکہ اس لیے کہ وہ ایک عمدہ اور قابل خاتون ہیں۔

ڈاکٹر فلوگ نے اس موقع پر وزیر اعظم نیتن یاہو اور وزیر انصاف کا شکریہ ادا کرتے ہوئے ایک بیان جاری کیا کہ وہ بینک کے عملے اور سرکاری عہدیداران کے ساتھ مل کے بینک آف اسرائیل اور اسرائیلی معیشت کے مسائل حل کرنے کیلئے پرامید ہیں۔