.

ایرانی اسلحہ اسمگلنگ کی پاداش میں 09 یمنی باشندوں کو سزا

یمنی حکام نے اسلحہ بردار جہاز فروری میں قبضے میں لیا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کی ایک عدالت برائے انسداد دہشت گردی نے بحری جہاز"جیہان1" کے عملے کے نو ارکان کو ایران کا جدید اسلحہ اسمگل کرنے کی پاداش میں ایک سے 10 سال تک کے عرصے کی قید کی سزائیں سنائی ہیں۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق یمنی کوسٹ گارڈ حکام نے رواں سال فروری میں "جیہان 1" بحری جہاز پر لادا گیا ایرانی اسلحہ قبضے میں لے کر وزارت دفاع کے حوالے کر دیا تھا۔ جہاز کے عملے سے 30 ہزار ڈالر مالیت کے کرنسی نوٹ بھی قبضے میں لی گئی تھی جسے قومی خزانے میں جمع کرا دیا گیا۔

یمنی حکام کے مطابق "جیہان1" پر ایرانی ساختہ جدیر ترین اسلحہ لوڈ کیا گیا تھا۔ اس میں"اسٹرلا" میزائل، پانچ کلومیٹر فاصلے تک ہوائی جہازوں کونشانہ بنانے والی توپیں۔ کئی ٹن "C4" باوردی مواد اور دیگر دھماکہ خیز آلات شامل تھے۔

یمن کے شہر حضر موت کی فوجداری عدالت نے اسی نوعیت کے ایک دوسرے مقدمہ میں اپیل کورٹ کی سزا میں ترمیم کرتے ہوئے دو ملزمان کی قید چھ سے کم کرکے تین سال کردی اور ایک کو بری کردیا۔

اس دوسرے کیس کا تعلق بھی مالدیپ کےایک بحری جہاز"ایوس" کا ہے جسے دسمبر2012ء میں ایک لاکھ 79 ہزار 51 ٹن دھماکہ خیز مواد اوراسلحہ اسمگل کرتے پکڑا گیا تھا۔ جہاز میں سوار تین البانوی شہریوں کو حراست میں لے کرجہاز قبضے میں لے لیا گیا تھا۔ عدالت نے بحری جہاز کی مالک کمپنی سے جرمانہ وصول کرنے کے بعد جہاز واپس کرنے کی ہدایت کی ہے۔