.

طرابلس کی گلیوں میں 34 ہلاک 300 زخمی

مظاہرین مسلح گروپوں کی شہربدری کا مطالبہ کرتے گولیوں کا نشانہ بنے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کے دارالحکومت طرابلس میں کم از کم 34 افراد ہلاک اور 300 سے زائدزخمی ہو گئے ہیں۔ ہلاکتوں کے یہ واقعات طرابلس کی گلیوں میں بندوق برداروں کے تصادم کے نتیجے میں سامنے آئے ہیں۔

پر امن مظاہرین جو مسلح ملیشیاوں پر پابندی لگانے کے مطالبہ کرتے ہوئے سڑکوں پر تھے کو فائرنگ کا نشانہ بناتے ہوئے دو مظاہرین کو ہلاک کر دیا گیا۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق طیارہ شکن بندوقوں سے مظاہرین پر فائرنگ کی گئی۔ واضح رہے گزشتہ کئی ہفتوں سے طرابلس کی گلیوں میں مسلح گروپ طیارہ شکن گنوں کی سرعام نمائش کر رہے ہیں۔

مسلح افراد کی طرف سے فائرنگ شروع ہونے پر مظاہرین پیچھے ہٹ گئے، تاہم دوبارہ واپس آئے تو وہ مسلح تھے۔ مسلح گروپ کے کمپاونڈ پر فائرنگ شروع کر دی جس کے نتیجے میں ان پربھی فائرنگ شروع کر دی۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق عسکری گروپ نے ضلع غارغورسے تمام ان عمارات پر فائرنگ کی تاکہ قبضہ کر سکیں۔ ملیشیا ارکان نے عمارات کے اندر سے خود کو مورچہ بند کر رکھا تھا، تاہم ایک عینی شاہد کا کہن اتھا ان کے گرد موت کا گھیرا تنگ ہو رہا ہے۔

وزارت صحت کے مطابق 13 افراد ہلاک اور 285 زخمی ہوئے ہیں۔ درجنوں سکیورٹی اہلکاروں نے فریقین کو ایک دوسرے سے دور کرنے کی کوشش کرتے رہے۔

وزیر اعظم علی زیدان نے ان ہلاکتوں پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔ ان کا کہنا کہ مظاہرین پرامن تھے اور انہیں وزارت داخلہ نے مظاہرے کی اجازت دی تھی۔ وزیر اعظم کے مطابق جب مسلح گروپوں نے ان پر فا ئرنگ کی تو اس کے بعد غارغور میں داخل ہوئے۔