سلامتی کونسل کی نشست کے لیے اردن کا 6 دسمبر کو انتخاب

کوئی اور ملک مقابلے میں نہیں آیا،جنرل اسمبلی میں رائے شماری ہوگی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے سعودی عرب کی جگہ اردن کو سلامتی کونسل کا غیرمستقل رکن منتخب کرنے کے لیے 6 دسمبر کو رائے شماری کرانے کا اعلان کیا ہے۔

سعودی عرب کو گذشتہ ماہ جنرل اسمبلی نے پہلی مرتبہ دوسال کے لیے سلامتی کونسل کا غیر مستقل رکن منتخب کیا تھا لیکن اس نے عالمی ادارے میں اصلاحات متعارف کرانے تک اس کی نشست سنبھالنے سے انکار کردیا تھا۔

اس کے انکار کے بعد اردن اس نشست کے لیے مشرق وسطیٰ اور ایشائی ممالک کی جانب سے امیدوار کے طور پر سامنے آیا ہے اور توقع ہے کہ اس کو سلامتی کونسل کا دوسال کی مدت کے لیے رکن منتخب کر لیا جائے گا کیونکہ کوئی اور ملک اس کے مقابلے میں انتخاب میں حصہ نہیں لے رہا ہے۔

اردن نے اگلے روزاقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی غیر مستقل نشست کے لیے باضابطہ درخواست دی تھی جبکہ اس سے پہلے سعودی عرب نے گذشتہ ہفتے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بین کی مون کو یہ غیرمستقل نشست نہ سنبھالنے کے فیصلے سے تحریری طور پر آگاہ کردیا تھا۔

اسی ماہ کے آغاز میں سفارت کاروں نے بتایا تھا کہ اردن سلامتی کونسل کی نشست سنبھالنے کے معاملے پر متردد تھا لیکن سعودی عرب نے ہی اسے فیصلہ تبدیل کرنے پر مجبور کیا ہے۔

دوہفتے قبل اردن نے بھی جنیوا میں قائم اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کی رکنیت کے لیے بطور امیدوار دستبردار ہونے کا اعلان کردیا تھا جس کے بعد سعودی عرب کو سینتالیس ارکان پر مشتمل کونسل کا رکن منتخب کر لیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں