.

یمن:فوج اور القاعدہ کے درمیان جھڑپ ،9 ہلاک

جنوب مشرقی صوبہ حضرموت کے شہر سیئون کے داخلی دروازے پر جھڑپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے جنوب مشرقی صوبہ حضرموت میں القاعدہ کے مشتبہ جنگجوؤں اور سکیورٹی فورسز کے درمیان جھڑپ میں تین فوجیوں سمیت نوافراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

یمن کی وزارت دفاع کی جانب سے سوموار کو جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ ''حضرموت کے شہر سیئون کے مغرب میں واقع داخلی دروازے پر واقع ایک چیک پوائنٹ پر القاعدہ کے جنگجوؤں نے حملہ کیا تھا جس کے بعد فوجیوں کے ساتھ جھڑپوں میں القاعدہ کے چھے دہشت گرد مارے گئے ہیں اور تین فوجی ہلاک ہوئے ہیں''۔

حال ہی میں یمن کے جنوبی اور جنوب مشرقی علاقوں میں القاعدہ کے جنگجوؤں کے سکیورٹی فورسز کے خلاف حملوں میں تیزی آئی ہے۔ سیئون ہی میں 24 نومبر کو القاعدہ جنگجوؤں کے حملے میں تین پولیس اہلکار مارے گئے تھے۔

ان دونوں علاقوں میں القاعدہ کے جنگجو زیادہ فعال ہیں اور یہ جزیرہ نما عرب میں القاعدہ کا گڑھ سمجھے جاتے ہیں۔یمنی سکیورٹی فورسز نے ملک کے باقی علاقوں سے القاعدہ کے جنگجوؤں کو نکال باہر کیا ہے یا ان کا قلع قمع کردیا ہے۔

قبل ازیں یمنی حکومت نے دارالحکومت صنعا میں قومی مذاکرات کے دوران تشدد کے واقعات سے بچنے کے لیے موٹرسائیکل کی سواری پر عارضی طور پر پابندی عاید کردی ہے تاکہ ''شوٹ اینڈ سکوٹ'' طرز کے حملوں سے بچا جا سکے۔یمن کی وزارت داخلہ نے اتوار کو ایک بیان میں کہا کہ یہ پابندی 15 دسمبر تک برقرار رہے گی۔