.

مصری فٹبالر کو سوئس میزبان کا تہنیتی بوسہ مہنگا پڑ گیا

ہم وطنوں کی تنقید سے جیت کا مزہ کرکرا ہو گیا: صلاح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری فٹ بالر کو سوئس سپر لیگ میں کامیابی پر ایوارڈ ملنے کی تقریب میں خاتون کے بوسے نے مشکل میں ڈال دیا۔ ایک عرب نوجوان کے ساتھ ایک مداح خاتون کی بوسے کی حد تک بڑھی ہوئی محبت پر عرب دنیا میں برہمی دکھانے لگی۔ یوں جیت کا مزہ ایک بوسے نے کرکرا کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق مصر کے اکیس سالہ فٹ بالر صلاح کو سنہ 2012 اور 2013 کیلیے سوئس ایسوسی ایشن آف فٹ بال سوئس سپر لیگ کے حوالے سے بہترین کھلاڑی قرار دیا۔

اس حوالے سے ایوارڈ دینے کی تقریب کے دوران تقریب میں صلاح کو اس کی کارکردگی کی بنیاد پر سپر ہیرو کے نام سے پکارا گیا اور خاتون میزبان نے آگے برھ کر اس سپر ہیرو کو گلے لگایا اور اس کا بوسہ لیا، اس منظر نے صلاح کے ہموطنوں اور عرب باشندوں کو ناراض کر دیا۔

ایک خاتون اور مرد کا یوں بے باکانی بوس و کنار کرنا عربوں کی روایت نہیں لہذا انہوں نے ناراضگی کا اظہار کرنا شروع کر دیا۔ اس صورتحال پر دکھی صلاح کا کہنا ہے کہ '' ان لوگوں نے میری خوشی کو برباد کر دیا ہے، وہ یہ بھول کر کہ میں نے انعام جیتا صرف اس چیز پر توجہ دے رہے ہیں ایک خاتون نے مجھے چوم لیا۔''

مصری کھلاڑی نے مزید کہا '' عالم یہ ہے کہ سوئٹزر لینڈ کے لوگ میری تحسین اور حوصلہ افزائی کر رہے ہیں اور میرے اپنے ہم وطن مجھ پر تنقید کر رہے ہیں۔''

یاد رہے مصری کھلاڑی صلاح نے سوئس ٹیم کے ساتھ اپریل 2012 میں کنٹریکٹ پر دستخط کیے تھے۔ وہ اس حوالے سے تیسرا مصری کھلاڑی ہے جسے سوئس سپر لیگ میں کھیلنے کا موقع ملا ہے۔ اس سے پہلے عبدالمنعم اور محمود النینی کو یہ اعزاز مل چکا ہے۔