.

تیونس کے نامزد وزیراعظم کا شفاف انتخابات کا وعدہ

سکیورٹی اداروں سمیت انتظامیہ کو غیر جانبدار رکھا جائے گا: مہدی جمعہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس کے نامزد وزیراعظم مہدی جمعہ نے آیندہ انتخابات کے شفاف انداز میں انعقاد کو یقینی بنانے اور ملک کو بحران سے باہر نکالنے کا وعدہ کیا ہے۔

مہدی جمعہ نے جمعہ کو ایک بیان میں کہا کہ وہ شفاف اور قابل اعتبار انتخابات کے انعقاد کے لیے سازگار حالات پیدا کریں گے اور ملکی معیشت کو بہتر بنائیں گے تاکہ تیونس بحران سے نکل آئے۔انھوں نے کہا کہ وہ سکیورٹی اداروں اور فوج سمیت انتظامیہ کی غیر جانبداری کو یقینی بنائیں گے۔

مہدی جمعہ نے یہ باتیں سوشلسٹ پارٹی کے لیڈر سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ہیں اور اسی جماعت نے ان کا یہ بیان حکمراں جماعت النہضہ اور دوسری جماعتوں کے لیڈروں کے درمیان اجلاس سے چندے قبل جاری کیا ہے۔اس اجلاس میں موجودہ وزیراعظم علی العریض کے سبکدوش ہونے اور مہدی جمعہ کے اقتدار سنبھالنے کے لیے مجوزہ لائحہ عمل پر غور کیا جارہا ہے۔

اکاون سالہ مہدی جمعہ پیشے کے اعتبار سے انجینیر ہیں۔ان کے سیاسی کیرئیر کی ابتدا اس سال مارچ ہی میں ہوئی تھی اور انھیں النہضہ کی قیادت میں مخلوط حکومت میں وزیر صنعت بنایا گیا تھا۔النہضہ اور حزب اختلاف کی جماعتوں نے گذشتہ ہفتے کے روز اپنے اجلاس میں انھیں مجوزہ عبوری حکومت کا سربراہ نامزد کیا تھا۔

حزب اختلاف اور النہضہ کے درمیان گذشتہ دوماہ سے جاری مذاکرات کے عمل میں ٹریڈ یونین یو جی ٹی ٹی کے سربراہ حسین عباسی نے ثالث کار کا کردار ادا کیا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ ہم چاہتے ہیں آج کے بعد دو ہفتے میں موجودہ وزیراعظم علی العریض سبکدوش ہوجائیں اور مہدی جمعہ اقتدار سنبھال لیں۔علی العریض کا کہنا ہے کہ وہ نئے انتخابات کے انعقاد سے قبل اقتدار چھوڑنے کو تیار ہیں۔