.

کابل میں خودکش بم دھماکا، تین نیٹو فوجی ہلاک

طالبان نے فوجی قافلے پر خودکش بم حملے کی ذمے داری قبول کرلی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں طالبان کے ایک خودکش حملہ آور نے نیٹو کے فوجی قافلے کے نزدیک اپنی بارود سے بھری کار دھماکے سے تباہ کردی ہے جس کے نتیجے میں تین نیٹو فوجی ہلاک اور چار راہگیر زخمی ہوگئے ہیں۔

عینی شاہدین کے مطابق بم دھماکے میں حملہ آور کی کار سمیت نیٹو فوج کی متعدد گاڑیاں تباہ ہوگئی ہیں۔ نیٹو کے تحت ایساف نے ایک بیان میں بم دھماکے میں اپنے تین فوجیوں کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے تاہم ان کی شہریت بتانے سے گریز کیا ہے۔

خودکش حملہ آور نے دارالحکومت سے مشرقی شہر جلال آباد کی جانب جانے والی شاہراہ پر حملہ کیا ہے۔ اس شاہراہ پر افغان حکومت کے متعدد دفاتر اور فوج کی تنصیبات قائم ہیں۔ واضح رہے کہ کابل میں سفر کے دوران ایساف کے فوجی سریع الحرکت ہوتے ہیں لیکن اس کے باوجود انھیں طالبان مزاحمت کار آئے دن اپنے حملوں کا نشانہ بناتے رہتے ہیں۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے نیٹو فوجیوں پر بم حملے کی ذمے داری قبول کرتے ہوئے کہا ہے کہ ''کابل کے نویں ضلع میں جارح فوجوں کے ایک گیسٹ ہاؤس پر خودکش فدائی حملہ کیا گیا ہے۔اس وقت غیرملکی فوجیوں کا ایک قافلہ بھی نزدیک سے گزر رہا تھا''۔

ترجمان نے اس حملے میں بارہ امریکی فوجیوں کی ہلاکت کا دعویٰ کیا ہے اور کہا ہے کہ متعدد فوجی زخمی ہوئے ہیں اور ان کی متعدد گاڑیاں تباہ کردی گئی ہیں۔واضح رہے کہ طالبان بالعموم اس طرح کے حملوں کے بعد ہلاکتوں کی تعداد بتاتے ہوئے مبالغہ آمیزی سے کام لیتے ہیں۔