بحرین میں دہشت گردی کی بڑی سازش ناکام

کشتی کے ذریعے لایا جانے والا اسلحہ اور گولہ بارود پکڑا گیا،13 مشتبہ افراد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بحرین کی سکیورٹی فورسز نے کشتی کے ذریعے دھماکا خیز مواد اور اسلحہ ملک میں اسمگل کرکے لانے اور بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے کی سازش ناکام بنا دی ہے۔

بحرین کے سکیورٹی سربراہ میجر جنرل طارق الحسن نے سوموار کو ایک بیان میں دہشت گردی کی اس سازش کو ناکام بنانے کی اطلاع دی ہے اور بتایا ہے کہ تحقیقات کی روشنی میں ملک میں سکیورٹی بڑھا دی گئی ہے۔

بحرین کی سکیورٹی فورسز نے ہفتے اور اتوار کو کارروائی کرکے ملک میں دہشت گردی پھیلانے کی اس سازش کو ناکام بنایا ہے اور دھماکا خیز مواد اور خودکار رائفلیں برآمد کی ہیں۔برآمد کیے گئے اسلحہ اور گولہ بارود میں ایرانی ساختہ پچاس دستی بم اور 295 کمرشل ڈیٹونیٹر شامل ہیں۔ان پر شام ساختہ تحریر تھا۔

بحرین کے پولیس سربراہ نے بتایا کہ ملک کی جانب آنے والی ایک کشتی کو روکا گیا تھا اور اس سے گولہ بارود کی بھاری مقدار ملی ہے۔اس کے علاوہ بعض ہتھیار ایک گودام سے بھی برآمد ہوئے ہیں۔

سکیورٹی فورسز نے دارالحکومت منامہ سے مشرق میں واقع علاقے الحورا میں ایک کار میں نصب بم کو بھی ناکارہ بنا دیا ہے۔وہاں سے اسلحہ اور گولہ بارود کا ایک اسٹور برآمد کیا ہے اور تیرہ مشتبہ افراد کو کشتی کے ذریعے ملک سے فرار ہونے کی کوشش کے دوران گرفتار کر لیا ہے۔

میجر جنرل طارق الحسن نے ایران یا حزب اختلاف کے ارکان پر دہشت گردی کی اس سازش میں براہ راست ملوث ہونے کا الزام عاید نہیں کیا۔البتہ انھوں نے مشتبہ افراد کے بیان کے حوالے سے بتایا ہے کہ وہ ایران کی جانب فرار ہونا چاہتے تھے۔

واضح رہے کہ بحرین میں گذشتہ تین سال سے جاری حزب اختلاف کی حکومت مخالف تحریک کے دوران متعدد مرتبہ گھریلو ساختہ دستی بم پکڑے گئے ہیں۔گذشتہ جمعہ کو ایسے ہی ایک بم کے دھماکے میں دو پولیس اہلکار زخمی ہوگئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں