.

فلسطینی سفارت خانہ پراگ سے محفوظ مقام پر منتقل کرنے کا مطالبہ

"سوکڈول" کالونی سفارت خانوں کے لیےغیر محفوظ قرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جمہوریہ چیک کے شہر"پراگ" شہر کی مرکزی کالونی "سوکڈول" کے چیئرمین بلدیہ نے فلسطینی ہائی کمشن کا دفتر کسی دوسرے شہر میں منتقل کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ "سوکڈول" کالونی کے چیئرمین پیٹر ہیگل نے وزارت خارجہ سے کہا ہے کہ وہ فلسطینی سفیر کی ہلاکت کے بعد ہائی کمشنر کے دفتر کے تحفظ کو یقینی نہیں بنا سکتے ہیں، لہٰذا سفارت خانہ کسی اور محفوظ مقام پر منتقل کیا جائے۔

خیال رہے کہ جمہوریہ چیک میں متعین فلسطینی سفیر جمال الجمل گذشتہ بدھ کے روز اپنی رہائش گاہ میں ہونے والے ایک پراسرار بم دھماکے میں جاں بحق ہو گئے تھے۔ پراگ پولیس کے مطابق بارودی مواد فلسطینی سفیر کے دفتر میں موجود ایک سیف میں رکھا گیا تھا۔

جمہوریہ چیک کی پولیس نے فلسطینی وزارت خارجہ کے اس بیان کی تائید کی ہے جس میں کہا گیا تھا کہ دھماکہ اس وقت ہوا تھا جب سفیر جمال الجمل نے ایک پرانی الماری کھولنے کی کوشش کی۔ تاہم یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ آیا یہ بارودی مواد وہاں کیسے پہنچا تھا۔ پولیس کے بیان کے مطابق دھماکے کو دہشت گردی کی کارروائی قرار نہیں دیا جا سکتا۔

یاد رہے کہ جمہوریہ چیک کے مرکزی شہر پراگ میں کئی ملکوں کے سفارت خانے موجود ہیں۔ قتل ہونے والے فلسطینی سفیر کچھ ہی عرصہ قبل براگ کی اسی مرکزی کالونی میں منتقل ہوئے تھے۔

خبر رساں ایجنسی 'اے ایف پی' کے مطابق سوکڈول بلدیہ کے چیئرمین پیٹر ہیگل نے جمعہ کے روز نائب وزیر خارجہ گیری شنائیڈر سے فون پر بات کرتے ہوئے فلسطینی سفارت خانہ کسی دوسرے مقام پر منتقل کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔ نائب وزیر خارجہ نے مسٹر ہیگل کے مطالبے پر سفارت خانے کی منتقلی پرغور کا وعدہ کیا ہے۔ تاہم ابھی تک حکومت کی جانب سے اس حوالے سے کوئی باضابطہ بیان جاری نہیں کیا گیا ہے۔