.

غزہ سے ایریل شیرون کی تدفین کی جگہ پر راکٹ حملہ

خاندانی فارم کے نزدیک گرنے والے راکٹوں سے کوئی جانی یا مالی نقصان نہیں ہوا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

غزہ کی پٹی سے فلسطینی مزاحمت کاروں کی جانب سے فائر کیے گئے دو راکٹ سابق اسرائیلی وزیراعظم آنجہانی ایریل شیرون کی تدفین کی جگہ ان کے خاندانی فارم کے نزدیک گرے ہیں۔

اسرائیلی فوج کی خاتون ترجمان نے اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ ''دو راکٹ شعار حانیگیف میں ایک کھلی جگہ پر گرے ہیں''۔یہ علاقہ غزہ کی پٹی کی شمالی سرحد کے ساتھ واقع ہے لیکن صہیونی فوج کی ترجمان نے یہ نہیں بتایا کہ راکٹ کہاں گرے ہیں۔

اسرائیلی پولیس کے ترجمان میکی روزنفیلڈ کا کہنا ہے کہ راکٹوں سے غزہ کی سرحد کے نزدیک واقع قصبے صدروت کو نشانہ بنایا گیا تھا۔یہ قصبہ سکیموررانچ سے صرف چار کلومیٹر مغرب میں واقع ہے۔تاہم اس حملے میں کوئی شخص زخمی ہوا ہے اور نہ کوئی مالی نقصان ہوا ہے۔

اسرائیلی پولیس اور فوج نے سابق وزیراعظم آنجہانی شیرون کی تدفین کے موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے تھے اور غیر مصدقہ رپورٹس کے مطابق صہیونی فوج نے ممکنہ راکٹ حملے کا توڑ کرنے کے لیے آئرن ڈوم میزائل دفاعی نظام بھی نصب کیا تھا۔

اسرائیل کے آرمی ریڈیو کی اطلاع کے مطابق ایریل شیرون کی تدفین کے دوران راکٹ گرے تھے۔اس موقع پر امریکا کے نائب صدر جو بائیڈن اور سابق برطانوی وزیراعظم ٹونی بلئیر بھی موجود تھے۔انھوں نے شیرون کی قبر پر پھول چڑھائے۔

ان دونوں لیڈروں نے اپنے اس عمل کے ذریعے ہزاروں فلسطینیوں کے قاتل اس سابق فوجی جنرل کو خراج عقیدت پیش کرنے کی کوشش کی ہے۔اسرائیل میں تو شیرون کو فلسطینیوں کے خلاف فوجی کامیابیوں پر جنگی ہیرو قرار دیا جارہا ہے جبکہ عرب دنیا انھیں جنگی مجرم سمجھتی ہے۔ان کا گذشتہ ہفتے انتقال ہوا تھا اور وہ گذشتہ آٹھ سال سے بستر مرگ پر بے حس وحرکت پڑے رہے تھے۔