.

عبوری دور سے بشار کو باہر رکھا جائے: برطانوی ارکان پارلیمنٹ

"اعتدال پسند شامی اپوزیشن پر اسلحے کی پابندی ختم کیا جائے"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانوی ارکان پارلیمنٹ نے وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون پر زور دیا ہے کہ شامی اپوزیشن کو مسلح کیا جائے اور ایک ایسے عبوری دور کی تشکیل کی جائے جس میں بشار الاسد کا کردار نہ ہو۔

تین برطانوی سیاسی جماعتوں کی طرف سے وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کو لکھے گئے ایک خط میں کہا گیا ہے کہ ''شام میں عسکری استعمال کے مضمرات کو از سر نو دیکھا جائے کیونکہ یہ شامی اپوزیشن اتحاد کی واضح تائید اور حمایت کرنے کا وقت ہے۔''

معروف سیاستدان الیسٹر برٹ جو شام کے بارے میں پالیسی امور کو دیکھتے ہیں کا ''العربیہ'' سے بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ''شامی اپوزیشن اتحاد اور شام کی قومی کونسل کا ساتھ دیا جائے۔''

انہوں نے مزید کہا ''اب جبکہ شام کے سلسلے میں جنیوا میں دوسری امن کانفرنس ہونے جا رہی ہے ہمیں اس چیز کا خیال رکھنا ہو گا کہ شام میں طاقت کے عدم توازن کی وجہ سے کیا مسائل ہیں اور انہیں نئے سرے سے کیسے دیکھا جا سکتا ہے۔''

برطانوی سیاستدانوں نے یہ بھی مطالبہ کیا ہے کہ ''شام کے سیاسی مستقبل کا تعین کرتے ہوئے عبوری دور کی اس طرح تشکیل کی جائے کہ اس میں صدر بشار الاسد کا کوئی کردار نہ ہو۔"

الیسٹر برٹ کا یہ بھی کہنا تھا کہ ''برطانیہ ان ریاستوں میں سے ایک ہے جو شام کے اعتدال پسند اپوزیشن اتحاد کیلیے اسلحہ حاصل کرنے کی پابندی ختم کی جائے۔''