.

"ایف 35" طیارے کے راز ایران کو فراہم کرنے والے انجینیئر کیخلاف مقدمہ

مظفر خزعی نے گھریلو سامان کی آڑ میں خفیہ راز تہران کو فراہم کئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی ریاست کنیٹی کٹ کی ایک عدالت نے پراسیکیوٹر جنرل کی ہدایت پر ایرانی نژاد ایک امریکی انجینیئر پر جدید ترہن لڑاکا طیارے"ایف 35" کی حساس معلومات چوری کرنے اور پھر انہیں تہران سمگل کرنے کی پاداش میں فرد جرم عائد کر دی ہے۔

استغاثہ کا کہنا ہے کہ دوہری شہریت رکھنے والے ملزم مظفر خزعی نے لڑاکا طیارے سے متعلق چوری شدہ معلومات ایران بھجوانے کی کوشش کی تھی جس پر اسے پولیس نے بیرون ملک جانے والی ایک پرواز پر سوار ہونے سے قبل حراست میں لے لیا تھا۔

ملزم کے خلاف عائد فرد جرم میں اس پر غیر قانونی طریقے سے حساس اور خفیہ دستاویزات حاصل کرنے اور انہیں دوسرے ملک بھجوانے کی کوشش کرنے کے الگ الگ الزامات عائد کیے گئے ہیں۔ جرم ثابت ہونے کی صورت میں ملزم کو 20 سال قید ہو سکتی ہے۔

استغاثہ کے مطابق مظفر کے خلاف تحقیقات کا آغاز نومبر میں کیا گیا جب کسٹم حکام اور ہوم لینڈ سکیورٹی حکام نے وہ سامان پکڑ لیا جو مظفر کی جانب سے ایران کے شہر ہمدان بھجوانے کے لیے لایا گیا تھا۔

اس سامان پر لکھا تھا کہ یہ گھریلو اشیاء ہیں لیکن جب سامان کھولا گیا تو اس میں سے ایف 35 لڑاکا طیارے کی دستاویزات برآمد ہوئی تھیں۔

استغاثہ کے مطابق مظفر کو نو جنوری کو نیوجرسی کے نیو آرک کے ہوائی اڈے سے اس وقت حراست میں لیا گیا جب وہ ایران روانہ ہو رہے تھے۔

خیال رہے کہ مظفر خزعی امریکا میں جنگی جہازوں کی تیاری میں معاونت کرنے والی ایک پرائیویٹ فرم میں ملازمت کرتے تھے، تاہم چند سال قبل انہیں کمپنی نے ملازمت سے فارغ کر دیا تھا۔