اسرائیلی فوج نے فلسطینی مظاہرین سے گاوں خالی کرا لیا

مظاہرین ایک ہفتے سے مسلسل احتجاج کر رہے تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فورسز نے فلسطینی مظاہرین سے ایک اہم گاوں خالی کرالیا ہے۔ یہ گاوں امریکی کوششوں سے پچھلے سال جولائی میں از سر نو شروع ہونے والے امن مذاکرات کا اہم موضوع ہے۔

سینکڑوں فلسطینی مظاہرین نے معروف فلسطینی گاوں عین حجلے میں ایک ہفتے سے احتجاج شروع کر رکھا ہے۔ یہ اہم گاوں وادی اردن میں شامل ہے جسے اسرائیل نے 1967 کی عرب اسرائیل جنگ کے دوران قبضے میں لے کر تباہ کر دیا تھا۔

اسرائیلی فوج نے مظاہرین سے اس گاوں کو طاقت استعمال کرتے ہوئے خالی کرا لیا ہے۔ اس سے پہلے مظاہرین کو علاقہ خالی کرنے کی وارننگ دی گئی تھی جسے مظاہرین نے نظر انداز کر دیا تھا۔

مظاہرہ منظم کرنے والے عبداللہ عبدالرحمان کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوج نے جمعہ کی صبح حملہ کیا اور زبردستی مظاہرین کے احتجاجی کیمپ اکھاڑ دیے۔

اسرائیل امن مذاکرات کی کامیابی کے بعد بھی اس علاقے میں اپنی فوجی موجودگی چاہتا ہے جبکہ فلسطینی عوام اس کی اجازت دینے کو تیار نہیں ہیں۔ اس سے محض ایک روز قبل اقوام متحدہ نے ایک رپورٹ میں بتایا تھا کہ اسرائیل نے 2013 کے دوران 390 عمارات تباہ کی تھیں۔

اسرائیلی حکام نے فوری طور پر اس واقعے کے بارے میں کو ئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔ البتہ اسرائیل ماضی میں عمارات کی تباہی پر کہتے رہے ہیں کہ یہ عمارات بغیر اجازت تعمیر کی گئی تھیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں